کرونا وائرس کی پھیلتی وباء تشویش ناک ہے – ڈی جی ہیلتھ بلوچستان

46

ڈائریکٹر جنرل ہیلتھ بلوچستان ڈاکٹر محمد سلیم ابڑو نے کہا ہے کہ عید الفطر کے موقع پر عوام کی اکثریت نے سوشل ڈسٹینس اور احتیاطی تدابیر کو بالا طاق رکھ دیا جس کے منفی نتائج آئندہ ایک دو روز میں برآمد ہونا شروع ہو جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ عوام کی جانب سے کورونا وائرس کو سنجیدہ نہیں لیا جارہا، حکومت کی جانب سے مروجہ ایس او پیز کو عوامی سطح پر نظر انداز کیا جارہا ہے۔

ڈی جی ہیلتھ کا کہنا ہے کہ اس وقت پھیلاؤ کا تناسب لگ بھگ 30 سے 35 فیصد تک ہے۔

انہوں نے کا کہا ہے کہ عوام نے احتیاطی تدابیر پر سختی سے عمل درآمد نہ کیا تو اکتوبر نومبر تک پھیلاؤ کا یہ تناسب 79 فیصد تک جاسکتا ہے۔ کورونا وائرس کی روک تھام کیلئے عوام کو ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا ہوگا۔

سلیم ابڑو کے مطابق دستیاب وسائل بروئے کار لاکر ابتک صورتحال کو سنبھالا ہوا ہے۔ عوام نے احتیاطی تدابیر کو مسلسل نظر انداز کیا تو وباء کے پھیلاؤ کا تناسب غیر معمولی حد تک  بڑھ  جائے گا۔ لاک ڈاون میں نرمی عوامی مشکلات کے مدنظر کی گئی تاہم عوام ذمہ داری کا مظاہرہ نہیں کررہے۔

انہوں نے کہا کہ عوامی سطح پر غیر سنجیدگی برقرار رہی تو مزید سخت حالات کا سامنا کرنا پڑے گا۔ ایس او پیز پر عمل درآمد کے فقدان کے باعث معاملات زندگی کی بحالی میں غیر معمولی تاخیر ہوسکتی ہے۔

سلیم ابڑو نے کہا ہے کہ صورتحال کے تناظر میں محکمہ صحت بلوچستان نے صوبائی حکومت کو سفارشات مرتب کردی ہیں۔