دکی، زامران اور سبی میں چار حملوں کی ذمہ داری قبول کرتے ہیں – بی ایل اے

495

بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان جیئند بلوچ نے میڈیا کو جاری بیان میں کہا ہے کہ ہمارے سرمچاروں نے دکی، زامران اور سبی میں چار مختلف کارروائیوں میں بلوچ وسائل کی لوٹ مار میں ملوث ٹرکوں، قابض فوج کی نصب کردہ جاسوس کیمرے، مواصلاتی ٹاور اور قابض فوج کے پوسٹ کو نشانہ بنایا۔

ترجمان نے کہا کہ بی ایل اے کے سرمچاروں نے گذشتہ شب دکی کے علاقے سنجاوی پاسرہ تنگی کے قریب بلوچ وسائل کی لوٹ مار میں ملوث ٹرکوں کو اس وقت نشانہ بنایا جب وہ بلوچستان سے پنجاب کوئلہ لیجارہے تھے۔ حملے میں سرمچاروں نے چھ ٹرکوں کو نذرآتش کردیا۔

انہوں نے کہاکہ ہم دشمن کے زرخرید مقامی کاسہ لیسوں کو یہ تنبیہہ کرچکے ہیں کہ اگر وہ بلوچ سرمچاروں و بلوچ قومی مفادات کیخلاف دشمن کے ساتھ صف بند ہوئے تو ان پر شدید نوعیت کے حملے کیئے جائینگے۔

مزید کہاکہ بلوچ لبریشن آرمی کے سرمچاروں نے گذشتہ شب زامران کے علاقے آرچن کور میں قابض پاکستانی فوج کی جانب سے نصب کیئے گئے کیمرے کو کارروائی میں تباہ کردیا۔

دریں اثناء ایک اور کارروائی میں سرمچاروں نے زامران کے علاقے دشتک کے مقام پر قابض فوج کی جانب سے انٹرنیٹ مواصلات کیلئے نصب ٹاور کو دھماکہ خیز مواد نصب کرکے تباہ کردیا۔

ترجمان نے کہاکہ بلوچ لبریشن آرمی کے سرمچاروں نے آج سبی کے علاقے کرمووڈھ میں قابض پاکستانی فوج کے ایک پوسٹ کو حملے میں نشانہ بنایا، سنائپر حملے کے بعد سرمچاروں نے بھاری ہتھیاروں سے دشمن پر حملہ کیا۔ حملے میں کم از کم دو دشمن اہلکار زخمی ہوگئے۔

آخر میں کہاکہ بلوچ لبریشن آرمی مذکورہ چاروں حملوں کی ذمہ داری قبول کرتی ہے۔ آزاد وطن کے حصول تک قابض پاکستانی فوج اور اس کے شراکت داروں پر ہمارے حملے جاری رہینگے۔