بلوچ نسل کشی کیخلاف اقدامات اٹھانے کیلئے اقوام متحدہ کے نام پٹیشن

424

بلوچ نسل کشی پر کارروائی کیلئے اقوام متحدہ کے نام آنلائن پٹیشن، فیکٹ فائنڈنگ مشن بھیجنے کا مطالبہ۔ پٹیشن پر چوبیس گھنٹوں سے کم وقت میں دس ہزار سے زائد دستخط ہوگئے۔

بلوچ یکجہتی کمی جانب سے آن لائن پٹیشن کا آغاز کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ یہ پٹیشن اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کی تنظیموں سے بلوچ نسل کشی پر اقدامات اٹھانے کی گذارش ہے اور حکام کو بلوچستان میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا ذمہ دار ٹھہرایا گیا ہے۔ ہماری پھر زور استدعا ہے کہ اقوام متحدہ بلوچستان میں انسانیت کے خلاف ہونے والے جرائم کی تحقیقات کے لیے اقوام متحدہ کے ورکنگ گروپ کی سربراہی میں فیکٹ فائنڈنگ مشن بھیجے۔

مزید کہا گیا ہے کہ بلوچ نسل کشی کو اکثر تسلیم نہیں کیا جاتا اور اسے پوشیدہ رکھا جاتا ہے، بنیادی طور پر بین الاقوامی توجہ کی کمی اور پاکستان کے اندر اس منظم نسل کشی کی تحقیقات اور اسے اجاگر کرنے کے لیے کسی آزاد اتھارٹی کی عدم موجودگی کی وجہ سے۔ لیکن، ہمیں بلوچستان میں طاقت کے پرتشدد استعمال سے حقیقی معنوں میں اس خطرے کا سامنا ہے۔ جہاں پچھلی دو دہائیوں سے فوجی جارحیت میں شدت آئی ہے اور ہزاروں بلوچ مارے گئے، جبری طور پر لاپتہ کیئے گئے، دیہات جلائے گئے اور آئی ڈی پیز کی زندگی گزارنے پر مجبور ہوئے۔ ریاستی اور غیر ریاستی عناصر جیسے ڈیتھ اسکواڈز بلوچستان میں درج ذیل طریقوں سے اپنی نسل کشی کی پالیسیاں استعمال کرتے ہیں، جن پر شاذ و نادر ہی توجہ ملتی ہے:

“مارو اور پھینکو” کی پالیسی، جو اب سی ٹی ڈی کے ذریعے کیے جانے والے “جعلی مقابلوں” میں تبدیل ہو چکی ہے۔
بلوچوں کی جبری گمشدگیاں، جن میں سے زیادہ تر کو دھمکیوں اور خوف کی وجہ سے دستاویز یا رپورٹ نہیں کیا گیا ہے۔
مقامی ملیشیاؤں کے ذریعے بلوچ عوام پر ظلم و ستم، جو “ڈیتھ اسکواڈز” کے نام سے مشہور ہیں۔
فوجی جارحیت، چھاپوں اور تلاشی کی کارروائیوں کی صورت میں، جس کا تجربہ بلوچستان میں روزانہ کی بنیاد پر ہوتا ہے۔
بلوچستان پاکستان کا سب سے پسماندہ خطہ ہے۔ اور ہزاروں افراد ہسپتالوں کی کمی، سڑک حادثات اور سیلاب کی وجہ سے جان سے ہاتھ دھو بیٹھتے ہیں۔ بلوچستان میں پسماندہ انفراسٹرکچر کے علاوہ ڈیرہ غازی خان میں نیوکلیئر پلانٹ اور 1998 میں چاغی میں کیے گئے نیوکلیئر ٹیسٹوں کی وجہ سے ہزاروں افراد کینسر جیسی مہلک بیماری سے متاثر ہوئے ہیں۔

آنلائن پٹیشن میں #MarchAgainstBalochGenocide کا مختصر تعارف لکھا گیا ہے۔

تعارف میں کہا گیا کہ #MarchAgainstBalochGenocide بلوچ نسل کشی کے خلاف تحریک کا تسلسل ہے، جو گزشتہ بیس سالوں کے دوران بلوچستان کے مختلف علاقوں میں مختلف اوقات میں منظم اور عمل میں آتی رہی ہے۔ یہ مارچ تربت ضلع کیچ سے ضلع گوادر کے پسنی کے علاقے بانک چڑھائی میں سیف، ودود اور شکور کے ساتھ بالاچ مولا بخش کے ماورائے عدالت قتل کے بعد شروع ہوا۔ کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ (سی ٹی ڈی) بلوچستان کی جانب سے نومبر 2023 میں یہ تیسرا ماورائے عدالت قتل تھا۔ جعلی مقابلے بلوچ کارکنوں اور طالب علموں کو بدنام زمانہ مارو اور پھینکو پالیسی کی تبدیل شدہ شکل ہیں جو اب سی ٹی ڈی بلوچستان کے نام پر سرانجام دی جارہی ہے۔ واضح رہے کہ بالاچ کو ماورائے عدالت قتل سے قبل مقامی عدالت میں پیش کیا گیا تھا۔ بالاچ کے اہل خانہ نے خاموشی کے ساتھ اپنے بچے کی تدفین سے انکار کر دیا اور تربت کے شہید فدا چوک پر دھرنا دیا۔ اس دھرنے نے ریاستی جبر کے متاثرین کے لیے امید کی کرن روشن کی اور جلد ہی بلوچستان کے مختلف علاقوں سے جبری طور پر لاپتہ ہونے والے افراد کے خاندان اپنے پیاروں کی بازیابی کا مطالبہ کرنے کے لیے دھرنے میں شامل ہوگئے۔ جلد ہی، تحریک بالاچ کے لیے انصاف کے نعرے لگانے سے #StopBalochGenocide کا مطالبہ کرنے میں بدل گئی۔

مزید بتایا گیا کہ ان خاندانوں نے اپنا مارچ 06 دسمبر 2023 کو تربت سے اسلام آباد کی طرف شروع کیا۔ اگرچہ، ریاست اور اس کی سیکورٹی فورسز نے مختلف مقامات پر #MarchAgainstBalochGenocide کو روکنے کی کوشش کی، کبھی کبھی ریاست کے حمایت یافتہ ڈیتھ اسکواڈز کے ذریعے ہراساں کرنا، سڑکوں کو روکنا اور بعض اوقات پولیس کے ذریعے براہ راست وحشیانہ طاقت اور تشدد کے استعمال کے ذریعے ان کو روکا گیا۔ اس مارچ نے بلوچستان کے تقریباً شہروں میں سب سے بڑے مظاہرے دیکھے، جہاں سے یہ گزرا۔ پنجگور، گریشہ، نال، خضدار، سوراب، قلات، منگوچر، مستونگ، کوئٹہ، کوہلو، بارکھان، رکھنی، ڈی جی خان، تونسہ اور ڈی آئی خان میں ہزاروں افراد مارچ کے شرکاء کے استقبال کے لیے سڑکوں پر نکل آئے یہاں تک کہ قافلہ پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد پہنچا۔ بلوچ عوام کے لیے انصاف اور بلوچ نسل کشی کے خاتمے کا مطالبہ کیا گیا۔

کیا گیا کہ آج #MarchAgainstBalochGenocide ریاستی جبر اور تشدد کا شکار سینکڑوں متاثرین کے خاندانوں کے ساتھ نیشنل پریس کلب اسلام آباد میں دھرنے کی شکل میں جاری ہے۔ اپنے خدشات کو دور کرنے کے بجائے ریاستی اداروں کی طرف سے ہمیں مسلسل دھمکیاں اور ہراساں کیا جا رہا ہے۔ حال ہی میں مارچ کے خلاف ڈس انفارمیشن اور انٹرنیٹ سنسر شپ کی مہم شروع کی گئی ہے۔ ہم آپ کی طرح دنیا کے اچھے لوگوں کی طرف رجوع کرتے ہیں تاکہ اپنی آواز بلند کریں اور اس اہم لمحے میں ہمارے ساتھ کھڑے ہوں۔

پٹیشن میں کیا گیا کہ بلوچ نسل کشی کے خلاف تحریک کے تیسرے مرحلے میں #MarchAgainstBalochGenocide کی حمایت میں پاکستان کے مختلف شہروں میں زبردست احتجاجی مظاہرے ریکارڈ کیے جا رہے ہیں۔

پٹیشن میں مطالبہ کیا گیا کہ اقوام متحدہ کے ورکنگ گروپ کی سربراہی میں ایک فیکٹ فائنڈنگ مشن بلوچستان میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی تحقیقات کے لیے بھیجا جائے۔

پٹیشن میں کہا گیا ہے کہ ہمیں ریاست کی نسل کشی کی پالیسیوں سے لڑنے کے لیے اس اہم وقت پر آپ کی حمایت اور توجہ کی ضرورت ہے۔ ہمیں دنیا کے تمام ضمیر فروشوں سے چاہیے کہ وہ اس پٹیشن پر دستخط کریں اور اسے اپنے سوشل میڈیا چینلز پر شیئر کریں اور ایک قوم کو تباہی کے دہانے سے بچانے کے لیے متحد ہو جائیں۔