بلیدہ میں ایک فوجی آفیسر سمیت چار اہلکار ہلاک،میناز میں ڈمپر نذرآتش کیا۔ بی ایل ایف

435

بی ایل ایف کے ترجمان میجر گہرام بلوچ نے میڈیا کو جاری بیان میں کہا ہے کہ ہمارے سرمچاروں نے جمعرات اور جمعے کی درمیانی رات کو ایک بج کر چالیس منٹ پر تربت اور بلیدہ کے راستے میں واقع سوراپ چڑائی کے نیچھے گھات لگا کر پاکستانی فوج کی گاڑیوں اور موٹرسائیکلز پر مشتمل ایک قافلے پر حملہ کیا جس کے نتیجے میں دشمن فوج کے ایک اعلی آفیسر سمیت چار دیگر اہلکار ہلاک جبکہ دو زخمی ہوئے۔

ترجمان نے کہاکہ بلوچستان لبریشن فرنٹ کے سرمچاروں نے یہ کارروائی تنظیم کو ملنے والی خفیہ اطلاعات کی بنیاد پر انجام دی۔ تنظیم کے متعلقہ ادارے نے مذکورہ علاقے میں غیرمعمولی فوجی نقل و عمل کی اطلاع دی تھی جس پر بی ایل ایف کے ایک دستے نے دشمن کے راستے پر مورچے سنبھالے اور قافلے کے قریب آنے پر اس پر حملہ کیا۔ا س حملے میں اس گاڑی کو نشانہ بنایا گیا جس میں فوج کا ایک اعلی آفیسر سوار تھا۔ حملے میں بھاری اور جدید ہتھیاروں کا استعمال کیا گیا۔

مزید کہاکہ مذکورہ آفیسر قافلے کی صورت علاقے میں فوج کشی کی تیاریوں کا جائزہ لینے کے لیے جا رہا تھا کہ بلوچ سرمچاروں نے اس کے قافلے کو نشانہ بنایا۔

انکا کہنا تھا کہ 31 اگست ، بروز جمعرات کو سرمچاروں نے میناز بلیدہ میں کہدا واجداد کے پمپ کے قریب ریاستی منصوبوں پر کام کرنے والے ایک ڈمپر کو نذر آتش کردیا۔بلوچ سرمچاروں نے ریاستی منصوبوں پر کام کرنے والے مزدوروں اور ڈمپر ڈرائیور کو انسانی ہمدردی کی بنیاد پر بغیر کوئی نقصان پہنچائے تنبیہ کرکے چھوڑ دیا۔

ترجمان نے آخر میں کہا کہ بلوچستان لبریشن فرنٹ ان دونوں کارروائیوں کی ذمہ داری قبول کرتی ہے۔ بلوچستان کی آزادی تک بی ایل ایف کی کارروائیاں جاری رہیں گی۔