تربت: ڈینگی وائرس کے بڑھتے کیسز ، شہری خوف کے شکار

253

ضلع کیچ کے مرکزی شہر تربت میں ڈینگی وائرس کی خوف برقرار ہے جبکہ عوام حکومتی انتظامات سے مطمئن نہیں ہیں۔

ڈینگی بخار بظاہر ایک معمولی سی بیماری ہے، لیکن چند ہی روز میں خطرناک صورتحال اختیار کر لیتی ہے اور موت کا سبب بھی بن سکتی ہے۔ ڈینگی کا نشانہ عام طور پر ایسے افراد زیادہ بنتے ہیں جن کی قوت مدافعت کمزور ہوتی ہے۔ ڈینگی کا مچھر عام طور پر رنگین ہوتا ہے اس کا جسم زیبرے کی طرح دھاری دار جبکہ ٹانگیں عام مچھروں کی نسبت لمبی ہوتی ہیں۔

ڈینگی بخار کی وجہ سے آپ کے پلیٹلیٹس بہت زیادہ گر سکتے ہیں۔ سنگین صورتوں میں آپ کو خون کی منتقلی کی بھی ضرورت پڑ سکتی ہے۔ بالغوں میں پلیٹلیٹس کی عام تعداد 150,000 سے 450,000 میں ہوتی ہے لیکن اگر آپ کو ڈینگی ہے تو یہ 20000-40000 تک کم ہوسکتے ہیں۔

ڈینگی بخار ایک مچھر بطور ویروس کی بیماری ہے جو قدرتی طور پر گرم علاقوں میں پایا جاتا ہے۔ یہ خون چوسنے والے مچھروں سے پھیلا ہوتا ہے جس سے بخار، سر درد، پیٹ درد، ٹھکان اور درد جیسے علامات ظاہر ہوتے ہیں۔

ڈینگی بخار کی بڑھتی ہوئی کیسز تعداد کی وجہ سے کیچ ضلع میں ایک بار پھر زور پکڑ گیا ہے۔ گوکدان، ڈھنک، بہمان شاہی ٹمپ، کوشک لٹ، کاہن پشت، چاہ سر، کوشک ملک آباد، زور بازار، دشتی بازار، سنگنی سر اور آپسر ان علاقوں سے گذشتہ چند دنوں میں 45 نئے کیسز کا اندراج ہوا ہے۔ جبکہ حالیہ اموات کی ریکارڈ کی تعداد 20 کے قریب بتائے جاتے ہیں ۔

مکران میڈیکل کالج کے معاون اسٹینٹ پروفیسر ڈاکٹر وقار تاج اور ڈاکٹر اقبال بلوچ نے ڈینگی کی وبا کی تباہی پر روشنی ڈالی اور روکاوٹی تدابیر پر بحث کی۔

انہوں نے کہا کہ ڈینگی ایک خاص وائرس کی بیماری ہے اور عام طور پر کمزور مزاج افراد میں زیادہ پائی جاتی ہے۔

چار مختلف قسموں کے وائرس انسانوں میں ڈینگی بخار کا سبب بناتے ہیں، ہر ایک وائرس کسی شخص کو صرف ایک بار متاثر کر سکتا ہے۔

علامات:

دنگی بخار کے علامات عام طور پر 3 سے 7 دنوں کے بعد ظاہر ہوتے ہیں۔ یہ علامات درج ذیل ہیں۔

  • بخار
  • سر درد
  • پیٹ درد
  • ٹھکان
  • جسم میں درد

دنگی بخار خون چوسنے والے مچھر سے پھیلا ہوتا ہے۔ یہ بیماری زیادہ تر گرم و رطوبت لیکن کسی بھی موسم میں پایا جا سکتا ہے۔ جب یہ مچھر کسی شخص سے خون چوستا ہے تو وہ بھی اس بیماری سے متاثر ہوجاتا ہے۔
پہلے چند دنوں میں بیماری کے علامات ظاہر نہیں ہوتے۔ اگر خون میں وائرس کی تعداد زیادہ ہو تو اس کو ڈینگی فیور کا بھیز کہا جاتا ہے ۔

ڈینگی بخار سے بچاؤ کے لئے یہ تدابیر اٹھائیں۔

  • مچھروں سے بچیں۔ ان کا پالنا اپنی جگہ صاف رکھیں اور مچھر مارنے والے مصنوعی دوا کا استعمال کریں۔
  • کھانے کی چیزوں کو تندی نہ دیں۔
  • فیتے کے پانی کے گلے سے پیتے رہیں۔