بلوچستان کے جلتے سکول ۔ دی بلوچستان پوسٹ فیچر رپورٹ

122

بلوچستان کے جلتے سکول 

دی بلوچستان پوسٹ فیچر رپورٹ

تحریر: زارین بلوچ

 بلوچستان کا تعلیمی نظام بے شمار مسائل سے دوچار ہے- قابل اساتذہ کی کمی، کم سہولیات سے محروم سرکاری اسکول، فرسودہ نصاب، اقربا پروری اور جانبداری کا پروان چڑھتا کلچر، اور بورڈ کے سالانہ امتحانات میں کھلم کھلا دھوکہ دہی ان میں سے چند ایک ہیں۔ لیکن پچھلے چند مہینوں میں، ایک اور بڑا مسئلہ اس فہرست میں شامل ہو گیا ہے، جو کے سکولوں کی آتش زنی ہے۔

 گزشتہ چند ماہ کے دوران کیچ، وندر، پسنی، پنجگور سمیت بلوچستان کے مختلف علاقوں میں سرکاری اور نجی اسکولوں کو آگ لگا دی گئی۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ مجرموں نے آدھی رات کو سکولوں میں توڑ پھوڑ کی اور فرار ہو گئے۔ ان سکولوں میں موجود فرنیچر، کتابیں، لیب کا سامان اور کمپیوٹر جل کر راکھ ہو گئے، جس کے نتیجے میں بیشتر سکولوں کو بند کرنا پڑا۔

اطلاعات کے مطابق صرف ضلع کیچ میں تین سکولوں کو جلا دیا گیا، جس سے وہ غیر فعال ہو گئے ہیں۔ بلوچستان کے دیگر علاقوں میں بھی اسکولوں میں آتشزدگی کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں، تاہم کیچ میں اس نوعیت کا یہ پہلا واقعہ ہے۔ مجرموں نے اسکول میں پمفلٹ پھینکے، جس میں مغربی تعلیمی نظام کے خلاف جہاد کو آگ لگانے کا ان کا بنیادی مقصد بتایا گیا۔ الفرقان اسلامی نامی ایک غیر واضح گروپ نے اسکولوں کو آگ لگانے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

 گروپ نے دعویٰ کیا کہ اسکول مغربی تعلیمی نظام کو بلوچستان میں درآمد کررہے ہیں، جس سے یہاں کے عوام کی اخلاقی تنزلی ہوگی اور معاشرے کے تانے بانے کو ختم کردیا جائے گا۔ مجرموں نے اپنے بچوں کو ان سکولوں میں بھیجنے کے بجائے والدین سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنے بچوں کو دینی مدارس میں بھیجیں جہاں وہ دینی تعلیم حاصل کر کے دنیا و آخرت میں کامیاب ہو سکیں۔

اس گروہ نے پنجگور میں پرچے بھی پھینکے جس میں والدین کو خبردار کیا گیا، کہ وہ اپنے بچوں کو پرائیویٹ سکولوں میں نہ بھیجیں۔ گروپ کا کہنا تھا کہ والدین اپنے بچوں کو سرکاری اسکولوں میں بھیجیں۔ یہ گروپ پرائیویٹ تعلیم پر عوامی تعلیم کی ترجیحات کا جواز پیش نہ کر سکا۔ شاید حقیقت یہ ہے کہ زیادہ تر پرائیویٹ اسکولوں کا نظام تعلیم مخلوط ہے، جہاں لڑکیاں اور لڑکے ایک کلاس روم میں اکٹھے بیٹھتے ہیں ،شاید اس سے کچھ لینا دینا ہوسکتا ہے۔ پنجگور میں انتباہی کتابچے اور چند حملوں کے بعد حفاظتی وجوہات کی بنا پر تین ماہ کے لیے سکول بند کر دیے گئے۔ انہیں اس سال اگست میں خوف اور ڈرکے ساتھ دوبارہ کھولا گیا تھا۔

 ان گروہوں کے استدلال کی لکیر ناقص اور مضحکہ خیز ہے۔ اول یہ کہ کون سی مذہبی کتاب اپنے پیروکاروں سے مذہبی تعلیم پھیلانے کے لیے اسکولوں کو آگ لگانے کا مطالبہ کرتی ہے؟ اور عقیدے کے ان خود ساختہ محافظوں کو مذہب کے نام پر اخلاقی احکام جاری کرنے کا ذمہ دار کون بناتا ہے؟ دوسری بات یہ کہ بلوچستان کے اسکولوں کا یہ حشر کیوں ہوا؟ ایسے واقعات پاکستان میں کہیں اور کیوں نہیں ہوتے، جیسے پنجاب یا سندھ؟ بلوچ فرزندوں کو اس سانحے سے کیوں گزرنا پڑتا ہے؟ تیسرا یہ کہ حکومت ان واقعات کا نوٹس کیوں نہیں لیتی؟ یہ دیکھتے ہوئے کہ یہ واقعات بلوچ میڈیا میں رپورٹ ہوئے اور بڑے پیمانے پر کوریج دیئے گئے ، اور یہی سوال پوچھا گیا کہ حکومت کوئی ایکشن کیوں نہیں لے رہی؟

بلوچستان کی تعلیم پہلے ہی مختلف مسائل سے دوچار ہے۔ 2018-19 ریئل ٹائم اسکول مانیٹرنگ سسٹم کے مطابق، بلوچستان ایجوکیشن پروجیکٹ کے تحت شائع ہونے والے ایک کتابچہ جو سرکاری اسکولوں کی نگرانی کرتا ہے، بلوچستان میں 15,000 اسکول ہیں۔ رپورٹ میں ان اسکولوں میں سے 74% کی نگرانی کی گئی، جو کہ مجموعی طور پر 11,000 ہیں۔ نتائج چونکا دینے والے تھے: 3000 اسکول بند پائے گئے، جبکہ بقیہ 31% لڑکوں کے اسکول اور 33% لڑکیوں کے اسکولوں میں بنیادی سہولیات جیسے فرنیچر، کتابیں، پینے کا صاف پانی، لیبز، بیت الخلا، صاف کلاس روم، اور اہل تعلیم سے محروم تھے۔  

 جن اسکولوں میں یہ سہولتیں موجود ہیں ان کا حال بھی کچھ بہتر نہیں ہے۔ سرکاری تعلیم کا معیار بہت بُرا ہے، اور والدین اپنی بچت کے ذریعے اپنے بچوں کو پرائیویٹ اسکولوں میں بھیجنے کے لیے بھاری فیسیں ادا کرنے کو تیار ہیں۔ اعلیٰ تعلیم کے خراب معیار کا مطلب ہے کہ ہزاروں طلباء کراچی، اسلام آباد اور لاہور جیسے شہروں کا سفر کرتے ہیں، جہاں وہ معیاری تعلیم حاصل کر سکتے ہیں۔

ان تمام مسائل کے باوجود، عقیدے کے خود ساختہ محافظوں کے کچھ گروہوں نے اسکولوں کو جلا کر حالات کو مزید خراب کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

سکولوں میں آتشزدگی نے بڑے پیمانے پر عوامی غم و غصے کو جنم دیا ہے۔ طلباء اور سول سوسائٹی کے ارکان سکولوں کو جلانے کی لہر کے خلاف احتجاج کرنے کے لیے بلوچستان کے مختلف علاقوں میں سڑکوں پر نکل آئے۔  

بلوچ اسٹوڈنٹس ایکشن کمیٹی (بی ایس اے سی) اس جدوجہد میں سب سے آگے رہی ہے، بیداری پھیلانے، مظاہروں کا انعقاد، اور سوشل میڈیا مہم چلا رہی ہے۔ اوتھل میں مظاہرین کا کہنا تھا کہ بلوچستان کا تعلیمی نظام بے شمار مسائل کا شکار ہے اور اسکولوں میں آتشزدگی پٹرول پھینکنے کے مترادف ہے۔ مظاہرین نے دعویٰ کیا کہ یہ واقعات الگ تھلگ اور بے ترتیب نہیں ہیں بلکہ خوف و دہشت پھیلانے اور بلوچ نوجوانوں کو تعلیم سے دور رکھنے کی سوچی سمجھی سازش کی پیداوار ہیں۔

تربت میں، سینکڑوں مظاہرین سڑکوں پر جمع ہوئے، جنہوں نے پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے ،اور سکولوں میں آتشزدگی کے خلاف نعرے لگا رہے تھے۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ بلوچستان کا تعلیمی نظام تباہی کے دہانے پر ہے اور اسکولوں میں آتشزدگی اسے فراموش کر رہی ہے۔ مظاہرین نے اس معاملے پر حکومت کی خاموشی اور بے عملی پر سوال اٹھایا۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ اسکول جلانے کی لہر بلوچ قوم کو تعلیم سے محروم کرنے کی سازش کا نتیجہ ہے۔