اسکولوں کو نذر آتش کرنے کیخلاف بلوچ طلباء کا احتجاج

124

بدھ کے روز بلوچستان کے ضلع لسبیلہ کے صدر مقام اوتھل میں بلوچ اسٹوڈنٹس ایکشن کمیٹی کی جانب سے بلوچستان میں اسکولوں کو جلانے کے خلاف احتجاج کیا گیا۔

اس موقع پر ہاتھوں میں بینر اورپلے کارڈ اٹھا کر ریلی کے شرکاء نے شہر کے سڑکوں پر گشت کرتے ہوئے تعلیمی دشمنی کے خلاف نعرہ بازی کی۔

انہوں نے بلوچستان میں اسکولوں کو تسلسل کے ساتھ نذر آتش کرنے کو ایک سازش قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس عمل کا بنیادی کا محرک تعلیم دشمن عناصر کا بلوچ نوجوانوں کو تعلیم سے دور رکھنا ہے۔ اس سازشی عمل کے خلاف تنظیم ہر فورم پر جدوجہد کرے گی۔

انہوں نے کہا کہ گزشتہ چند ماہ سے بلوچستان کے مختلف علاقوں میں اسکولوں کو جلا کر خاکستر کیا جارہا ہے۔

مظاہرین نے کہا کہ ضلع کیچ کے تحصیل بلیدہ میں کلکشان اسکول کو آگ لگا کر خاکستر کیا گیا اور پسنی کے علاقے وڈ سر، ریک پشت میں گرلز پرائمری اسکول کے انفراسٹرکچر کو جلا کر خاکستر کیا گیا۔ کیچ کے ہی علاقے دازن میں خان کلگ ہائی اسکول کو سازشی عناصر اور آلہ کاروں کی جانب سے آگ لگا کر راکھ بنا دیا گیا اور اسکول میں تعلیمی سرگرمیوں کا تسلسل روک دیا گیا۔

مظاہرین نے رواں ہفتے وندر کے علاقے سونمیانی میں پرائیویٹ تعلیمی ادارہ ٹی سی ایف پر شرپسند عناصر کی حملہ اور آگ لگانے کو اسی عمل کا تسلسل قرار دیتے ہوئے کہا کہ بلوچستان ایک ایسا خطہ ہے جہاں خواندگی کی شرح تسلسل کے ساتھ گراوٹ کا شکار ہو رہی ہے اور نوجوان نسل کو گمراہ کرنے کےلیے غیر سماجی اور غیر معاشرتی سرگرمیوں کو مزید فعال کیا جا رہا ہے۔ اس طرح کے عمل نوجوان نسل میں خوف و ہراس کا باعث بن کر طالبعلموں کی راہ میں مزید رکاؤٹ کا حائل کرے گی جو کہ نہایت ہی تشویشناک ہے۔

انہوں نے کہا کہ بلوچ طلبا تنظیم کی حیثیت سے اس عمل کی نہ صرف مذمت کرتے ہیں بلکہ اس سازشی عمل کے خلاف عملی بنیادوں پر جدوجہد کریں گے۔