بی ایل اے کے فدائین بلوچ قومی مزاحمت میں تاریخ رقم کررہے ہیں ۔ بی آر اے

432

کراچی حملے میں مزاحمت کے اصل مقاصد حاصل کرلیے گئے، قومی مقصد کے حصول کیلئے ایسے حملوں کی حمایت جاری رکھا جائے گا – بیبگر بلوچ

بلوچ ریپبلکن آرمی کے ترجمان بیبگر بلوچ نے میڈیا کو جاری کردہ ایک بیان میں بلوچ لبریشن آرمی کے مجید برگیڈ کے فدائین آپریشنل کمانڈر سلمان حمل عرف نوتک، شہزاد بلوچ عرف کوبرا، سنگت تسلیم عرف مسلم، سنگت سراج کنگر عرف یاگی کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ فدائین نے بلوچ قومی آزادی کے جنگ کے تسلسل میں ایک نئی روح پھونک دی ہے جس کی شدت ہر بلوچ نوجوان اور پیر بزرگ، خاتون محسوس کرتا رہے گا۔

ترجمان نے کہا کہ وطن کی آزادی اور آبیاری کیلئے بلوچ نوجوانوں کے جذبات، احساسات اور قربانی کا جذبہ قبضہ گیر پاکستان کیلئے قہر ثابت ہورہے ہیں۔

بیبگر بلوچ نے مزید کہا کہ اسٹاک ایکسینج کسی بھی ملک کے معیشت کیلئے ریڈ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہے۔ کراچی کے حساس علاقے میں واقع ہے، وہاں پہنچ کر اسٹاک ایکسینج کو نشانہ بنانا پاکستان کے اداروں کی ناکامی بیان کررہی ہے جبکہ بلوچ سرمچاروں نے بہترین حکمت عملی اور منصوبے ست ثابت کردیا کہ بلوچ سرمچار کبھی بھی اور کہی پر دشمن پر حملہ کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

ترجمان نے کہا کہ پاکستان بلوچستان میں اپنے قبضہ گیریت کو دوام بخشنے کیلئے بلوچ نسل کشی کے ساتھ استحصالی منصوبے جاری رکھی ہوئی ہے، ان استحصالی منصوبوں میں چین برابر کی شراکت دار ہے۔ جس طرح ساتھی تنظیم بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان جیئند بلوچ نے کہا ہے کہ یہ حملہ محض پاکستان کے معاشی مفادات پر نہیں بلکہ بلوچستان میں چین کے استحصالی منصوبوں کے ردعمل میں چینی معاشی مفادات پر بھی ایک حملہ اور وارننگ ہے کہ چین اگر بدستور بلوچ استحصال میں شامل رہے گا، بلوچ نسل کشی میں پاکستان کی معاونت جاری رکھے گا، تو اس کے مفادات پر بلوچ سرمچاروں کے حملوں میں مزید شدت لائی جائیگی۔

بیبگر بلوچ نے کہا کہ یہ حملہ بلوچ مسلح مزاحمت میں ایک عظیم کامیابی سے کم نہیں، قومی آزادی و مقصد کے حصول کیلے فدائی حملوں کو ہماری تنظیم قبضہ گیر کے خلاف ایک اہم اور موثر ہتھیار سمجھتی ہے ان حملوں کی عملی حمایت جاری رکھا جائیگا۔