بلوچ، سندھی اور پشتونوں کو ملکر آزادی کی جدوجہد کی دعوت دیتا ہوں – الطاف حسین

599

ﻣﺠﮭﮯ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﻓﮑﺮ ﻧﮩﯿﮟ، ﺑﻠﻮﭺ، ﭘﺸﺘﻮﻥ ﯾﺎ ﺳﻨﺪﮬﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﺮﯾﮟ ﺑﺲ ﮨﻤﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺍٓﺯﺍﺩ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﮯ۔ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺍﻭﻻﺩﻭﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﮐﺎ ﺿﺎﻣﻦ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﮔﯽ – الطاف حسین

متحدہ قومی موومنٹ کے رہنماء الطاف حسین نے آج بروز جمعرات سوشل میڈیا پر خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ﺑﻠﻮﭺ، ﺳﻨﺪﮬﯽ ﺍﻭﺭ ﭘﺸﺘﻮﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻞ ﮐﺮ ﺍٓﺯﺍﺩﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﺪﻭﺟﮩﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺩﻋﻮﺕ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﻮﮞ اور اس کی ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﺮے۔

انہوں نے کہا کہ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻓﻮﺝ ﺑﻠﻮﭺ، ﭘﺸﺘﻮﻥ ﺍﻭﺭ سندھی ﻣﮩﺎﺟﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﺑﮩﻨﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﮯ ﺣﺮﻣﺘﯽ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻓﻮﺝ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﻓﻮﺝ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻟﻌﻨﺖ ﮨﻮ۔

الطاف حسین نے کہا کہ ﻣﯿﮟ ﺑﻠﻮﭺ، ﭘﺸﺘﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺳﻨﺪﮬﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﻋﻮﺕ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺍٓﺋﯿﮟ ﻣﻞ ﮐﺮ ﺑﯿﻦ ﺍﻟﻘﻮﺍﻣﯽ ﺳﻄﺢ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺍٓﺯﺍﺩﯼ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﺪﻭﺟﮩﺪ ﮐﺮﯾﮟ، ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﻓﮑﺮﻧﮩﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﺮﮯ۔

انہوں نے بلوچستان کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻓﻮﺝ ﺑﻠﻮﭼﻮﮞ ﮐﻮ ﻗﺘﻞ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﻧ ﮑﯽ ﻻﺷﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﺴﺦ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺟﺘﻤﺎﻋﯽ ﻗﺒﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﻓﻨﺎ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮉﯾﺎ، صحافی اور ﺗﺠﺰﯾﮧ ﻧﮕﺎﺭ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺘﮯ ہیں، ﺳﺐ ﮐﮯ ﺯﺑﺎﻧﻮﮞ ﭘﺮ ﺗﺎﻟﮯ ﻟﮓ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔

انہوں نے مزید کہا کہ ﮨﻤﯿﮟ ﻣﻞ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺣﻖِ ﺧﻮﺩﺍﺭﺍﺩﯾﺖ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻗﻮﺍﻡِ ﻣﺘﺤﺪﮦ ﻣﯿﮟ ﻣﺸﺘﺮﮐﮧ ﺟﺪﻭﺟﮩﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ

ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﮯ اور ﻣﺠﮭﮯ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﻓﮑﺮ ﻧﮩﯿﮟ، ﺑﻠﻮﭺ، ﭘﺸﺘﻮﻥ ﯾﺎ ﺳﻨﺪﮬﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﺮﯾﮟ ﺑﺲ ﮨﻤﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺍٓﺯﺍﺩ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﮯ اور ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺍﻭﻻﺩﻭﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﮐﺎ ﺿﺎﻣﻦ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﮔﯽ۔

الطاف حسین نے اپنے خطاب میں کہا کہ ﺟﻮ ﺑﻠﻮﭺ، ﭘﺸﺘﻮﻥ، ﻣﮩﺎﺟﺮ ﯾﺎ ﺳﻨﺪﮬﯽ ﺭﯾﺎﺳﺘﯽ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﺎ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﯾﺎ ﻧﺴﻞ ﮐﺸﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻈﺎﻟﻢ ﭘﺮ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﯿﮟ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﻌﺎﻑ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﯾﮕﯽ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﺑﮯ ﺿﻤﯿﺮ ﻟﻮﮒ ﮐﯿﺴﮯ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﮮ ﺑﮭﯽ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﮯ ﮔﻨﺎﮦ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﻗﺘﻞ ﻋﺎﻡ ﺍﻭﺭ ﻧﺴﻞ ﮐﺸﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﻠﻮﺙ ﮨﻮ۔

انہوں نے مزید کہا کہ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﯾﺎ ﺭﯾﺎﺳﺘﯽ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﺗﻨﻘﯿﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺣﻖ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﺑﻠﻮﭼﻮﮞ، ﺳﻨﺪﮬﯿﻮﮞ، ﭘﺸﺘﻮﻧﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻣﮩﺎﺟﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺟﺒﺮﯼ ﻃﻮﺭﭘﺮ ﻻﭘﺘﮧ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ اور ﺍٓﺋﯽ ﺍﯾﺲ ﺍٓﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍٓﺭﻣﯽ ﮐﮯ ﭨﺎﺭﭼﺮ ﺳﯿﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻻﭘﺘﮧ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﻮ ﺗﺎ ﺩﻡ ﻣﺮﮒ ﺷﺪﯾﺪ ﺟﺴﻤﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﺯﮨﻨﯽ ﺗﺸﺪﺩ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻧﮧ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻓﻮﺝ ﻭﮨﯽ ﻣﻈﺎﻟﻢ ﺩﮨﺮﺍ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺑﻨﮕﺎﻟﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔

انہوں نے اقوام متحدہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ﺍﻗﻮﺍﻡ ﻣﺘﺤﺪﮦ ﮨﻤﯿﮟ ﺑﺘﺎﺋﮯ ﮐﮧ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﻈﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ ﮐﯿﺎ ﺍٓﭘﺸﻦ ﺭﮦ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ ﺍﺏ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻗﻮﺍﻡِ ﻣﺘﺤﺪﮦ ﮐﯽ ﺯﯾﺮ ﻧﮕﺮﺍﻧﯽ ﺑﻠﻮﭼﺴﺘﺎﻥ، ﺳﻨﺪﮪ ﺍﻭﺭ ﭘﺸﺘﻮﻥ ﻋﻼﻗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﯾﻔﺮﻧﮉﻡ ﮐﺮﺍﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮨﺎﮞ ﮐﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ پوﭼﮭﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍٓﺯﺍﺩ ﺭﮨﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﯾﺎ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ رہنا چاہتے ہیں۔