Tag: پانی کی قلت

تازہ ترین

انسانی حقوق کے اداروں کا رویہ بلوچستان بارے غیر منصفانہ ہے – ماماقدیر

کوئٹہ میں وائس فار بلوچ مسنگ پرسنز کی جانب سے قائم کردہ بھوک ہڑتالی کیمپ کو آج 4685 دن مکمل ہوگئے۔ کوئٹہ سے بیبرگبلوچ، عبدالکریم بلوچ، نور احمد بلوچ اور دیگر نے کیمپ آکر لواحقین سے اظہار یکجہتی کی- کیمپ آئے وفد سے گفتگو میں وی بی ایم پی کے وائس چیئرمین ماما قدیر بلوچ نے کہا کہ بلوچستان میں ریاست دہشت گردانہکارروائیوں میں تیزی لائی ہے پاکستانی فوج نے بلوچستان کے مختلف علاقوں میں اپنے مقامی ایجنٹوں اور زرخرید قاتلوں کے ذریعےفوجی بربریت اور جبری گمشدگیوں کا سلسلہ جاری رکھا ہے بلوچ لواحقین آئے روز پر امن جدوجہد کا حصہ بن رہے ہیں اپنے پیاروںکی بازیابی کیلئے ریاستی جبر سے کوئی مرعوب نہیں ہوگا ہم بلوچ لواحقین کے ساتھ پر امن جدوجہد سے ایک انچ پیچھے نہیں ہونگے- ماما قدیر بلوچ نے کہا کہ بلوچ فرزندانِ وطن کی عظیم قربانیوں اور ہمارے ماؤں بہنوں کی جہد مسلسل سے ریاست پریشان ہوچکی ہےاور پسپا ہو گیا ہے گزشتہ مہینوں سے جبری گمشدگیوں اور مسخ شدہ لاشوں کی پھینکے کے عمل میں کافی تیزی آئی ہے- انہوں نے کہا کہ پاکستانی ریاست نے عالمی انسانی حقوق کے قوانین کی دھجیاں اڑائی ہیں لیکن کوئی پوچھنے والا نہیں ہے انسانیحقوق کے تنظیموں کے دعوے اور بیانات لفاظی رہ گئی ہیں بلوچستان انسانی حقوق کے حوالے سے بلیک ہول بنتا جا رہا ہے نیشنل اورانٹرنیشنل میڈیا بلیک آؤٹ ہے سب نے چشم پوشی روا رکھا ہے- ماما قدیر بلوچ کا مزید کہنا تھا کہ انسانی حقوق کے اداروں کی جانب سے نوٹس لینے اور اعلامیے جاری ہونے کے باوجود کوئیانسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں میں نا کوئی کمی آ رہا ہے نا ان پہ عملدرآمد کیا جا رہا ہے-

حب: فائرنگ سے خاتون قتل

بلوچستان کے صنعتی شہر حب میں گھر کے اندر فائرنگ میں خاتون کو قتل کردیا گیا- پولیس کے مطابق مذکورہ خاتون گھر میں کام کر رہی تھی جب مسلح افراد نے گھر میں گھس کر فائرنگ کھول دی جس کے نتیجے میںخاتون موقع پر ہی جانبحق ہوگئی۔ فائرنگ کا واقعہ اتوار کے روز پیش آیا- پولیس کے مطابق قتل کی وجہ خاندانی جھگڑا ہوسکتا ہے، قتل میں ملوث ملزمان جائے وقوعہ سے فرار ہوگئے ہیں جنکی تلاش پولیسکررہی ہے- خیال رہے کہ بلوچستان میں گھریلو جھگڑے اور غیرت کے نام پر خواتین کی قتل کے واقعات تواتر سے رپورٹ ہوتے رہے ہیں جبکہ جبکہمذکورہ واقعات میں ملوث افراد میں سے بہت ہی کم تعداد کو قانون نافذ کرنے والے ادارے انصاف کے کٹہرے میں لاسکے ہیں۔ اعداد شمار کے مطابق پاکستان میں سالانہ ایک ہزار سے زائد خواتین قتل ہوجاتے ہیں جن میں سے اکثریت کو غیرت کے نام پر قتلکردیا جاتا ہے- واقعے کی اطلاع ملتے ہی پولیس نے جائے وقوع پر پہنچ کر لاش کو اسپتال پہنچادیا ہے جہاں ضروری کارروائی کے بعد نعشیں ورثاءکے حوالے کردیا گیا-

شوہر کو فورسز نے حراست میں لے کر لاپتہ کیا – حاجرہ بی بی

بلوچستان کے ضلع ہرنائی کے علاقے شاہرگ کے رہائشی بی بی حاجرہ نے لاپتہ بلوچوں کی بازیابی کے لئے کام کرنے والی تنظیموائس فار بلوچ مِسنگ پرسنز کے کیمپ آکر اپنے شوہر مجیب الرحمٰن ولد عبدالرحمٰن کے کوائف جمع کئے۔ لاپتہ مجیب الرحمن کی اہلیہ نے الزام عائد کیا ہے کہ چھ ماہ قبل پیرا ملٹری فورس (ایف سی)، سی ٹی ڈی اور خفیہ ایجنسیوں کےاہلکاروں نے اس کے شوہر کو حراست میں لینے کے بعد نامعلوم مقام منتقل کردیا ہے جس کے بعد ان کے بارے میں معلوم نہیں کہاں اورکس حال میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس دن وہ صبح آٹھ بجے گھر سے نکلا تھا اور کوئلہ کانکنوں کو لے جارہا تھا کہ فورسز نے انہیں حراست میں لیا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ فورسز نے وہاں موجود لوگوں کو دھمکی دی ہے کہ اس کے اغواء ہونے پہ گواہی دی ان کو بھی اغواء یا قتل کیاجائے گا۔ خیال رہے کہ بلوچستان میں جبری گمشدگیوں کے واقعات روزانہ رونما ہورہے ہیں، قوم پرست اور انسانی حقوق کے ادارے پاکستانیفورسز و خفیہ ایجنسیوں پہ الزام عائد کرتے ہیں کہ لوگوں کو اغواء کرنے میں وہ برائے راست ملوث ہیں تاہم فورسز ان الزامات کی تردیدکرتے ہیں۔ گذشتہ دنوں پاکستان کے وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق ریاض پیرزادہ نے ایک انٹرویو کے دوران الزام عائد کیا ہے کہ لاپتہ افراد نےہمسایہ ممالک میں پناہ لے رکھی ہے اور ان میں سے کچھ دہشت گردی کی کارروائیوں میں مارے گئے جن کے کلبھوشن یادیو یاہمسایہ ممالک سے رابطے تھے‘۔

جبری گمشدگیاں ہی سب سے بڑی تشدد ہے – سمی دین بلوچ

جبری گمشدگیاں وہ تشدد ہے جس سے نہ صرف ایک شخص بلکہ اس کا پورہ خاندان متاثر ہوتا ہے۔ اقوام متحدہ پاکستان سے جوابطلبی...

عالمی برادری بلوچستان پر پاکستانی مظالم کا نوٹس لے – بی این ایم جرمنی...

بلوچ نیشنل موومنٹ کی طرف سے کیے گئے ایک مظاہرے میں شرکاء نے مطالبہ  کیا ہے کہ عالمی برادری بلوچستان پر پاکستان کےمظالم کا...