گیلامن وزیر زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسے

545

پشتون تحفظ موومنٹ (پی ٹی ایم) کے مرکزی کونسل کے رکن اور پشتو کے ابھرتے ہوئے شاعر گلہ من وزیر اسلام آباد کے اسپتال میں انتقال کرگئے۔

پشتون تحفظ موومنٹ کے رہنما منظور پشتین نے پمز ہسپتال کے سامنے گیلامن وزیر کے موت کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ گیلامن وزیر کے علاج کی ہر ممکن کوشش کی گئی لیکن گیلامن نے آنکھیں بند کر لیں۔

پی ٹی ایم کے رہنما منظور پشتین کے مطابق اسلام آباد میں آزاد داوڑ کے کئی دوستوں نے گیلامن پر حملہ کیا اور انہیں اتنا مارا کہ اسلام آباد کے ڈاکٹر ان کا علاج کرنے سے قاصر رہے جبکہ ان پر پاکستان سے باہر جانے پر پابندی لگا دی گئی۔

پشتون تحفظ موومنٹ (پی ٹی ایم) کے سربراہ منظور پشتین نے پہلے دن گیلامن وزیر کی صحت کے بارے میں ایک ویڈیو بیان میں کہا کہ اسلام آباد کے پمز ہسپتال میں گیلامن کی حالت بہت زیادہ خراب ہے۔

پشتین نے کہا کہ پی ٹی ایم کے سرگرم رکن اور پشتو شاعر گیلامن وزیر پر 7 جولائی کی شام اسلام آباد میں دس، پندرہ افراد نے ان پر حملہ کیا۔

پشتین نے ایک ایکس پوسٹ میں کہا، “گیلامن وزیر پر آج آزاد داوڑ نامی شخص نے حملہ کیا، اور گیلامن شدید زخمی ہوگئے۔”

اسلام آباد کے سنگجانی تھانے میں گیلامن وزیر پر حملے کا مقدمہ ضمیم خان کی مدعیت میں آزاد داوڑ اور ان کے ساتھ 10، 12 افراد کے خلاف درج کیا گیا ہے۔

تھانہ سنگجانی کے ایس ایچ اور عاشق خان نے 10 جولائی کو بتایا کہ اس مقدمے کا ملزم معلوم ہے، اور انہوں نے سی سی ٹی وی کی ریکارڈنگ حاصل کر لی ہے، اس شخص کی اسلام آباد میں لوکیشن اور دفتر بند تھا اور انہیں بتایا گیا کہ اس نے  اسلام آباد چھوڑ دیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ وہ اس شخص اور اس کے دوستوں کے پیچھے پولیس کو شمالی وزیرستان بھیجنے کی کوشش کر رہے ہیں اور جلد ہی وہ اس کیس کے ملزمان کو گرفتار کر لیں گے لیکن پولیس نے بتایا کہ انہیں ابھی تک وزیرستان جانے کی اجازت نہیں دی گئی۔

گیلامن وزیر کون تھا؟

گیلامن وزیر کا نام حضرت نعیم تھا، وہ اسد خیل، رزمک، شمالی وزیرستان کا رہنے والا تھا۔

سول ایکٹیوسٹ عالم زیب کا کہنا ہے کہ گلہ مین پشتون تحفظ موومنٹ میں سرگرم تھے، اپنی محنت سے ہی نہیں بلکہ اپنی شاعری سے بھی وہ پشتون عوام کے لیے ایک عظیم کردار تھے۔

انہوں نے کہا کہ گیلامن بحرین میں مزدور کے طور پر کام کرتا تھا لیکن اس پر پاکستانی حکومت نے بحرین سے پی ٹی ایم کو فنڈز بھیجنے کا الزام لگایا اور 2020 میں پاکستان کے مطابق اسے بحرین سے نکال دیا گیا اور اس کا نام یہاں ایگزٹ کنٹرول لسٹ میں ڈالا۔

عالم زیب کے مطابق گیلامن وزیر کا تعلق شمالی وزیرستان کی تحصیل رزمک کے گاؤں اسد خیل سے تھا۔ گیلا آدمی کے دو بھائی اور چھ بہنیں ہیں، اس کے بھائی غیر ممالک میں کام کرتے ہیں، اس کی ماں زندہ ہے اور اس کا باپ فوت ہوچکا ہے۔