سمو ریحان؛ محبت کی ایک لازوال کہانی – برزکوہی

1288

سمو ریحان؛ محبت کی ایک لازوال کہانی

تحریر: برزکوہی

دی بلوچستان پوسٹ

محبت اور قربانی باہم جڑے ہوئے جذبات ہیں۔ اس گہرے تعلق کو سمجھنے کے لیے، ہمیں دونوں تصورات کی گہرائیوں میں جھانکنا پڑے گا، یہ دریافت کرنا پڑے گا کہ محبت کی پاکیزگی کس طرح حتمی و ابدی قربانی میں اپنا اعلیٰ ترین اظہار تلاش کرتی ہے۔

محبت، اپنی پاکیزہ شکل میں، ایک بے لوث عمل ہے، حقیقی محبت کا مطلب ہی اپنی محبوب کی خوشی کو اپنی ذات و اپنے مفادات سے بالا رکھنے کی خواہش رکھنا ہے۔ یہ بے لوثی، اس قربانی کے عمل میں جھلکتی ہے، جہاں ایک فرد اپنی ذات سے بڑے مقصد کے لیئے اپنی خواہشات، حفاظت اور یہاں تک کہ زندگی کو بھی ترک کردیتا ہے۔ جب محبت کرنے والے اپنی قوم کی آزادی کے لیے خود کو اور اپنی دنیاوی محبت کو قربان کرنے کا فیصلہ کرلیں، تو وہ اپنے ذاتی رشتے کو ایک ماورائی سطح پر پہنچادیتے ہیں، اپنی تقدیر کو نہ صرف ایک دوسرے کے ساتھ، بلکہ اپنی قوم کی تقدیر کے ساتھ تاابد جوڑ دیتے ہیں۔

رومیو اور جولیٹ کی کہانی، جہاں محبت کا حتمی عمل ان کا ایک دوسرے کے لیے مرنے پر آمادگی بن جاتی ہے۔ اسی طرح، وکٹر ہیوگو کی “لے میزرابل” میں، “ایپونن” کا کردار “ماریئس” کے لیے اپنی جان قربان کر دیتی ہے، جو خود قربانی کے ذریعے محبت کی تبدیلی کی طاقت کو واضح کردیتی ہے۔

آزادی کی جدوجہد کے دائرے میں یہ تعامل اور بھی زیادہ پُر اثر ہو جاتا ہے۔ جب دو محبت کرنے والے اپنی قوم کی آزادی کے لیے شہید ہونے کا انتخاب کریں، تو وہ محض ذاتی محبت کے پابند نہیں رہتے، بلکہ ایک عظیم تر مقصد کے مشترکہ وژن کا اٹل حصہ بن کر خود محبت بن جاتے ہیں۔ ان کی محبت، ذاتی جذبے کو حب الوطنی کے جذبے سے جوڑ کر صرف ایک دوسرے کے لیے موقوف نہیں کرتی بلکہ پوری قوم تک پھیل جاتی ہے۔

سچی محبت کے اظہار کے طور پر ہارنے کا تصور اس طرح کی قربانیوں میں ایک “پیراڈکس” بن جاتا ہے۔ یعنی محبت کسی کو پانے کی شدید خواہش ہے، لیکن محبت کی اعلیٰ ترین شکل پانے سے رضاکارانہ طور پر دستبردار ہونے کا فیصلہ ہے۔ اپنے زمینی وجود سے دستبردار ہو کر، یہ محبت کرنے والے محبت کی ایک ایسی شکل کا مظاہرہ کرتے ہیں جو جسمانی دائرے تک محدود نہیں رہتی۔ ان کی قربانی محبت کی پائیدار طاقت کا ثبوت بن جاتا ہے، جو موت سے بالاتر ہے اور دوسروں پر اپنے اثرات کے ذریعے لافانی شکل حاصل کرتی ہے۔ جیسا کہ خلیل جبران نے فصاحت کے ساتھ کہا تھا، ’’محبت اپنی گہرائی کو جدائی کی گھڑی تک نہیں جانتی‘‘۔ اس لیے قربانی کا عمل ان کی محبت کی گہرائی اور صداقت کا حتمی پیمانہ بن جاتا ہے۔

فلسفہ قربانی و محبت ہمیں یہ سکھاتا ہے کہ محبت میں ہارنا مایوسی کا نہیں بلکہ گہرے حوصلے اور یقین کا کام ہے۔ یہ اس بات کا اعتراف ہے کہ سچی محبت کے لیے اکثر حتمی ضبط کی ضرورت ہوتی ہے، جہاں عقیدت کا سب سے بڑا اظہار محبوب کے لیے اپنی جان دینے کی رضامندی اور ان کے آدرشوں میں پایا جاتا ہے۔ بے لوثی کا یہ عمل محبت کی صلاحیت کی ایک طاقتور یاد دہانی بن جاتی ہے، اور ایک ایسی قوت بنتی ہے، جو انفرادی وجود کو عبور کرنے اور تاریخ کے دھارے کو بدلنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

بلوچستان کے خشک اور ناہموار مناظر میں، جہاں ہوائیں محبت کی قدیم داستانوں کی سرگوشیاں لے کر سرسراہتی ہوئی چلتی ہیں اور پہاڑ عشق کی گواہ بن کر صدیوں سے بنا سرگوشی کیئے استادہ کھڑے ملتے ہیں، وہاں ہمیں ریحان اور سمو کی محبت کی کہانی ایک خوشبو کی صورت ملتی ہے- محبت اور قربانی کے آزمائشوں میں تپ کر کندن بن جانے والی ایک ناقابل فراموش داستان۔ ان کی محبت، ان کی روح کے تانے بانے میں بُنی ہوئی ایک نازک دھاگے کی طرح تھی۔ انکی محبت محض ایک عارضی رومانوی الجھن نہیں تھی بلکہ عقیدت کی ماورائی طاقتوں میں ایک ہوکر، اپنی ذات سے بڑے مقصد کے لیے حتمی قربانی کا ثبوت تھا۔

ریحان؛ جس کی آنکھیں آدھی رات کے سمندر کی گہرائیوں کی عکاسی کرنے والی گہرائی رکھتی تھیں۔ ریحان؛ جو ہزاروں سورجوں کی تپش سے جلنے والی روح انقلاب کی کوکھ میں پلنے والے خوابوں کا مجسم اظہار تھا۔ اسکا دل نہ صرف اپنی سمو بلکہ اپنی سرزمین کے لیئے بھی دھڑکتا تھا، وہ سرزمین جس نے اس کے آباؤ اجداد کو پالا تھا۔ وہ آزادی کے اس وعدے کے لیے زندہ تھا، جو صحرا کی ریت پر ناچتے سرابوں کی طرح آنکھوں میں زندہ اور حقیقت بن جانے کیلئے بے قرار رہتے ہیں۔

سمو، آسمانی اور دلکش، ہوا کے پروں پر چلنے والی راگ کی طرح زندگی کے بھلبھلیوں سے گزرتی تھی۔ اس کی ہنسی پہاڑیوں کی خاموش موسیقی تھی۔ گودھولی کے ریشمی دھاگوں کی طرح جھرنے والے بالوں اور صدیوں کی حکمت کو سمیٹنے والی آنکھوں کے ساتھ، وہ کشمکش سے دوچار دنیا میں امید اور خوبصورتی کی کرن تھی۔ ریحان کے لیے اس کی محبت ایک بن مانگی ہوئی منت تھی، ایک مقدس رشتہ جو مشترکہ خوابوں اور سرگوشیوں کے وعدوں کے سہارے باندھا گیا تھا۔

سمو و ریحان، صرف محبت کے رشتے سے نہیں بلکہ اس سے بھی زیادہ گہرے تعلق کے ذریعے ایک ہوئے تھے- ان کا اٹوٹ تعلق جبر کی زنجیروں سے آزاد زمین کا مشترکہ نظریہ تھا۔ ان کی منگنی ایک ایسی محبت کا ثبوت تھا، جس نے جسمانی خواہشات سے بالاتر ہونے کی کوشش کی، جو ناقابل تسخیر مشکلات کے سامنے ایک ساتھ کھڑے رہنے کا عہد تھا۔

ڈوبتے ہوئے سورج کی سنہری روشنی میں، جب دنیا عنبر اور سرخی مائل رنگوں میں نہا رہی تھی، تب ایک زور دار دھماکے کے ساتھ ریحان اپنی آخری قربانی دے کر محبت کا دولہا بن جاتا ہے۔ اس کی رخصتی محض موت نہیں تھی بلکہ مقصد کی ترنم تھی، جو اسکے وطن کے وادیوں میں گونجتی رہے گی اور اسکی قربانی جلال کا ایک ایسا شعلہ تھا، جو آزادی کی آرزو کرنے والوں کے دلوں میں تاابد بھڑکتا رہے گا۔ اس کا نام ایک لیجنڈ بن گیا، آزادی کے لیے ایک ایسا نعرہ جس نے مظلوموں کی روحوں کو ہلا کر رکھ دیا اور مزاحمت کے شعلوں کو بھڑکا دیا۔

پانچ سال بعد، اسی سرزمین پر جہاں پہاڑ قدیم بہادری کی داستانیں سناتے ہیں اور ہوائیں بغاوت کی خوشبو لے کر چلتی ہیں، سمو تقدیر کے دہانے پر کھڑی تھی۔ سمو کا دل، اگرچہ ریحان کے کھونے سے داغدار تھی، لیکن اسکا دل لامتناہی امید کے ساتھ دھڑک رہا تھا۔ وہ بھی خود کو آزادی کی قربان گاہ میں پیش کرتی ہے، عقیدت کا ایک آخری عمل، جو قربانی کے آدرشوں میں ایک نغمے کی طرح ابد تک گونجتا رہے گا۔

سمو ریحان کی محبت کی کہانی، جو تاریخ کے صحیفوں میں لکھی جائے گی، محض رومانس نہیں تھا بلکہ ان دونوں کے ناقابلِ تسخیر جذبے کا ثبوت تھا، جو اپنی ذات پر قوم اور زندگی پر نظریات کا انتخاب کرتے ہیں۔ یہ ایک ایسی محبت تھی، جو دنیا سے ماورا تھی، ایک ایسا شعلہ جو آزادی کی تڑپ والی زمین کے پس منظر میں روشن ہوا تھا۔

بلوچستان کے لامتناہی میدانوں کی دھوپ کی رنگیلیوں میں، جہاں ہوا صدیوں کے راز سرگوشی کرتی سناتی ہے، وہاں دو قبروں کے سنگ مزار کھڑے ہیں، جو دِکھنے میں معمولی لیکن پوری ایک قوم اور نسلوں کیلئے قابل فخر ہیں۔ ریحان کی قربانی ایک دور دراز لیکن اٹل دمکتا ستارہ ہے، جو مظلوموں کے دلوں کو آزادی کی صبح کی طرف راہنمائی کرتی رہے گی۔ اس کی محبت، سمو، اس کی غیر موجودگی کے سائے میں پانچ سال گزار چکی تھی، سمو کا دل ان پانچ طویل سالوں میں یادوں کا باغ بن چکا تھا، اس باغ کا ہر ایک پھول ان کے مضبوط بندھن کا ثبوت تھا۔

اپنی محبت سے ملنے، وہ اسی راستے پر چلی تھی، جس پر اس سے پہلے اسکی محبت آخری وداع کرکے چلا تھا۔ بغاوت کی چادر اسی خاموش وقار کے ساتھ اس کے کندھوں پر جمی ہوئی تھی۔ جس صبح سمو نے اپنی تقدیر کو گلے لگایا، آسمان اس کے عزم کی گواہی دے رہا تھا۔ سمو کا دل صرف محبت سے نہیں بلکہ اس سرزمین کے لیے ایک پرجوش امید کے ساتھ دھڑک رہا تھا، جس نے ان دونوں کے خوابوں کو جنم دیا تھا۔

سمو کا آخری عمل، اس کے محبوب کے لیے ایک درخواست اور آزادی کے لیے ایک پکار تھی۔ وہ آخری دھماکہ ایک نغمہ تھا، ہر ایک انصاف کی پکار تھی، بکھری ہوئی زمین کا ہر ٹکڑا سمو ریحان کی لازوال محبت اور قربانی کا ثبوت تھا۔ ہوا میں چمیلی اور بارود کی خوشبو پھیلی ہوئی تھی، جو خوبصورتی اور تباہی کے دوہرے پن کی ایک پُرجوش یاد دہانی بن چکی تھی۔

سمو کے آخری عمل کے بعد، زمین ماتم کرتی نظر آئی اور برابری کے ساتھ جشن بھی منا رہی تھی۔ بلوچستان کے لوگ جو کبھی جبر کے بوجھ تلے جھک چکے تھے، اب لمبے لمبے استادہ فخر سے کھڑے ہیں۔ ریحان اور سمو کی میراث سے ان کی قوم کی روحیں مضبوط ہوچکی ہیں۔ ان کی کہانی قوم کی روح کے تانے بانے میں بنی ہوئی ہے، اور محبت کرنے والوں کے نام ایک سرگوشی کی داستان بن گئی ہے۔

ریحان اور سمو نے اپنے محبت کے تقدس کو مدنظر رکھتے ہوئے قوم کا انتخاب کرتے ہوئے محبت کو ترک نہیں کیا تھا بلکہ اپنی محبت کو جاویدانی دیکر اپنے لوگوں کے دلوں میں بسا لیا۔ ان کی روحیں، جڑواں شعلوں کی طرح، ناگوار زمین کی تزئین پر ہمیشہ کے لیے رقص کناں ہوگئی، جو تاابد آزادی کے راستے کو روشن کرتی رہے گی۔ بلوچستان کی ہوائیں ان کی کہانی کو زمان و مکاں کی حدوں کو توڑ کر دور تک لے جائیں گی، انکی محبت کی داستان اتنی گہری ہے کہ اس محبت نے زندگی اور موت کی سرحدوں کو عبور کرلیا ہے، جو ہمیشہ خواب دیکھنے کی ہمت کرنے والوں کے دلوں کی دھڑکنوں میں گونجتی رہے گی۔

ریحان اور سمو کے بندھن کی گہرائی کو سمجھنے کے لیے پہلے خود محبت کے جوہر کو تلاش کرنا ہوگا۔ محبت، اپنی حقیقی شکل میں، محض پیار کے تبادلے یا خوشی کے لمحاتی لمحات تک محدود نہیں ہے۔ یہ ایک ایسی طاقت ہے جو دنیا سے ماورا ہے، ایک ایسی آسمانی آگ ہے، جو انسانی روح کو پاک اور بلند کرتی ہے۔ ریحان اور سمو کی محبت اس اعلیٰ محبت کا ایک مجسم نمونہ ہے، جو نہ صرف ان کے دلوں میں بلکہ اپنے وطن کی آزادی کے لیے ان کے اٹل عزم میں بھی روشن ہے۔

تاریخ کی اوراق میں، محبت اور قربانی اکثر ساتھ ساتھ چلتے رہے ہیں، ہر ایک دوسرے کو بڑھاوا دیتا ہے۔ “اورفیس” اور “یوریڈیس” کی افسانوی کہانیوں پر غور کریں، جہاں اوریفیس کی اپنی بیوی سے محبت نے اسے پاتال میں اترنے اور موت سے لڑنے پر مجبور کیا، وہ اپنی محبت کو موت سے واپس لانے کے لیے سب کچھ خطرے میں ڈال دیتا ہے۔ بالآخر ناکام ہونے کے باوجود، اس کا سفر اس گہرے سچ کی دلالت بن جاتا ہے کہ محبت کا سب سے بڑا اظہار، ہر چیز، حتیٰ کہ اپنی جان کو بھی قربان کرنے کی آمادگی میں پایا جاتا ہے۔

ریحان اپنی جوانی میں ایک عقاب کی مانند تھا، جو کراہت کی چوٹیوں سے اونچی اوڑان بھرتا تھا، اس کا جذبہ غیر متزلزل اور آزاد تھا۔ بلوچستان کے لیے اس کی محبت ایک طوفان کی مانند تھا، ایک ایسا طوفان، جو اس کی روح کے اندر بچپن سے ہی برپا تھا، جو اس سے عمل، قربانی اور خود کو حتمی سپردگی کا مطالبہ کرتا تھا۔ جب اس نے شہید کی حیثیت سے اپنی جان قربان کرنے کا انتخاب کیا تو یہ کوئی ہلکا پھلکا فیصلہ نہیں تھا بلکہ اپنے پیار اور اپنی سرزمین دونوں کے لیے ایک پختہ عہد تھا۔ اس کی موت غم اور فتح کا ایک مشترکہ نغمہ تھا، آزادی کی قربان گاہ پر ایک ایسا نذرانہ، جہاں محبت اور قربانی ایک واحد، پُرجوش لَے میں ضم ہوجاتے ہیں۔

سمو، ریحان کی قربانی کے نتیجے میں ایک خاموش طاقت اور پائیدار محبت کا پیکر بن چکی تھی۔ سمو کا دل، اگرچہ غم سے بوجھل تھا، لیکن اسکے عزم کی تال، ایک اٹوٹ طاقت کے ساتھ اسکے دل میں دھڑکتا رہتا۔ پانچ سال تک، اس نے ریحان کی محبت کی یاد کو پروان چڑھایا، اس جولیٹ کی طرح، جس نے اپنے رومیو کے بغیر زندگی پر موت کا انتخاب کیا۔ سمو کی قربانی کا حتمی عمل ریحان کو خراج عقیدت اور محبت کی ناقابل تسخیر طاقت کا ثبوت ہے۔ ریحان کے راستے پر چلنے کا انتخاب کرتے ہوئے، سمو نے ان کی انفرادی قربانیوں کو محبت اور آزادی کے لازم و ملزوم ہونے کے لازوال عہد نامے میں بدل دیا۔

محبت اور قربانی کا فلسفہ، جیسا اسے ریحان اور سمو نے اپنی زندگیوں سے بیان کیا، سچی عقیدت کی نوعیت پر ایک گہرا مراقبہ بن چکا ہے۔ محبت کی ایک نئی تشریح اور ایک نیا تعریف بن چکا ہے۔ وجود کی عظیم مسجر میں، ان کی کہانی ایک وشد دھاگہ ہے، جو جذبے، درد اور حتمی آزادی کے رنگوں سے چمکتی ہے۔ ان کی قربانیاں محض انحراف کی کارروائیاں نہیں ہیں بلکہ بلوچستان کے لیے ان کی محبت کا گہرا اثبات ہیں۔

ولیم شیکسپیئر نے، رومیو اور جولیٹ کی المناک کہانی میں اس ابدی سچائی کو سمیٹ لیا، جہاں ان کی محبت کی پاکیزگی نے ایک دوسرے کے لیے مرنے پر آمادگی کا حتمی اظہار پایا۔ اسی طرح، ریحان اور سمو کی محبت نے اپنے زمینی وجود کی عارضی حدوں سے آگے بڑھ کر قربانی کے عمل میں اپنی حقیقی تکمیل تلاش کی۔

بلوچستان کے چٹیل میدانوں اور بلند و بالا پہاڑوں میں پھیلنے والی ہواؤں میں آج بھی سمو ریحان کی محبت کی بازگشت سنائی دے سکتی ہے، انکی محبت ایک یاد دہانی ہے کہ سچی محبت زندگی کی مدت سے نہیں بلکہ قربانی کی گہرائی سے ناپی جاتی ہے۔ ریحان اور سمو کی کہانی محبت اور قربانی کے درمیان لازم و ملزوم بندھن کی لازوال داستان ہے، یہ یاد دہانی ہے کہ ہر سچی محبت کے دل میں، آزادی کا بیج پنہاں ہوتا ہے کیونکہ محبت آزادی ہے اور آزادی محبت ہے۔


دی بلوچستان پوسٹ: اس تحریر میں پیش کیئے گئے خیالات اور آراء لکھاری کے ذاتی ہیں، ضروری نہیں ان سے دی بلوچستان پوسٹ میڈیا نیٹورک متفق ہے یا یہ خیالات ادارے کے پالیسیوں کا اظہار ہیں۔