‘بلوچ راجی مُچی’، بلوچ یکجہتی کمیٹی نے پمفلٹ جاری کردی

385

بلوچ یکجہتی کمیٹی نے ‘بلوچ راجی مُچی’ (بلوچ قومی اجتماع) کے حوالے سے ایک پمفلٹ جاری کردی ہے۔

پمفلٹ میں کہا گیا ہے کہ جنت نظیرسر زمین کی وارث، بلوچ قوم کی آج سے نہیں پچھلے 75 سالوں سے ریاست پاکستان انتہائی بے رحمانہ و شاطرانہ انداز میں نسل کشی کر رہی ہے۔ وہ فوجی آپریشنوں و جدال و قتال  کی شکل میں، لاپتہ کرکے ٹارچر و مسخ شدہ لاشوں کی شکل میں، بے روزگاری و ناخواندگی کی شکل میں، باڈر بندش اور باڑ لگانے جیسے سازشی حربوں کی شکل میں، خون خوار سڑکوں پر حادثہ کی صورت منصوبہ بندی کے تحت قتل عام کی شکل میں، ماہی گیروں کی ٹرالرنگ مافیا کی ذریعے استحصال کی شکل میں، بنیادی و انسانی حق علاج و معالجہ کی دانستہ فقدان کی شکل میں اور سب سے زیادہ اور انتہائی خطرناک ریاستی سر پرستی میں پورے قوم میں منشیات سرعام پھیلا کر پورے بلوچ قوم کو ذہنی اور جسمانی طور پر مفلوج اور مکمل ختم کرنے کی ریاستی منصوبہ بندی جو دن بدن بڑھتی جارہی ہے۔

مزید کہا گیا ہے کہ باشعور بلوچ عوام! کیا ہم بحیثیت قوم اپنی قومی وجود ، شناخت ، قومی بقاء کی فناء اور معدومی کو دیکھ کر پھر بھی خوف کے مارے چپ کر خاموشی سے بلوچ قوم کی زوال کے دنوں کو اسی طرح دیکھتے رہے گے؟ کیا ہماری ماؤں اور بہنوں کی ننگ و ناموس، عزت و غیرت کی اب اتنی اوقات نہیں بچ چکی جس کی روزانہ کی بنیاد پر پامالی دیکھتے ہوئے آنکھیں نیچے کرکے خاموش رہے؟ کیا اپنی ماؤں، بہنوں، بچے اور بچیوں کی ہر دن سڑکوں پر لرزہ خیز چیخ و پکار کو دیکھ کر ، سن کر، پھر بھی وہاں سے ندامت آمیزی میں  گزر کر یا پھر گھر میں بیٹھ کر اپنی ضمیر اور احساسات پر خوف و طماع کی بڑا پتھر رکھ کر اسے جگانے سے انکار کر لے؟ کیا آئے روزبے روزگاری و گھریلوں تنگ دستی کے سبب اپنے زندگیوں سے مایوس ہونے والے اپنے پھول جیسے نوجوانوں کی خودکشیوں کی خبر سن کر پھر بھی ایک دفعہ اپنی ضمیر کی صدا نہیں سننا چاہیے؟ جو ہمیں بار بار بتا رہی ہے،  اے بلوچ آپ کی ساحل و سائل کو  غیر بلوچ بے دردی سے لوٹ مار  کرکے ارب پتی اور کرب پتی بن کر شان و شوکت اور پُرآسائش زندگیاں گزار رہے ہیں اور دوسری طرف آپ کی سرزمین کے مالک نوجوان درد آمیزی و مجبوری کی حالت میں دو وقت روٹی کے لیے خودکشیاں کررہے ہیں، پھر بھی آپ خاموش ہو؟ منشیات میں آج لاکھوں بلوچ نوجوان ذہنی و جسمانی طور پر مفلوج ہورے ہیں، ریاست منشیات فروشوں کو کھلی چھوٹ دیکر منشیات فروشی میں ان کا معاوان ہے اور یہ عمل بھی بلوچ نسل کشی کا حصہ ہے۔ کیا اپنے نوجوانوں کو اس طرح فنا ہوتے دیکھ کر احساس درد نہیں ہورہا؟

پمفلٹ میں کہا گیا کہ اے بلوچ قوم! ہم اکیسویں صدی میں بھی اس چیز کا ادراک نہیں کرپارہے ہیں کہ بلوچ سماج اور بلوچ راج میں منصوبہ بندی کے تحت منشیات کو پھیلانے میں براہراست ریاست کا کردار ہے؟ آؤ بلوچ قوم نکلو بلوچ قوم جگا دو ضمیروں کو شکست دو خوف کو بیدار کرو جُرت کو آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر سینہ سپر ہوکر ڈٹ کر متحد ہو کر راجی مچی میں شامل ہوکر دنیا کو پیغام دو ہم ایک زندہ قوم ہے بہادر، باشعور اور خودار قوم ہے ہماری عظمت ہماری مزاحمت ہماری جدوجہد جاری رہے گی بلوچ نسل کشی کے مکمل خاتمے تک