بیجنگ کا اسلام آباد سے بلوچ لبریشن آرمی و دیگر کیخلاف ایک اور ’ضرب عضب‘ شروع کرنے کا مطالبہ

795

بیجنگ نے اسلام آباد سے کہا ہے کہ وہ بلوچ لبریشن آرمی (BLA) سمیت عسکریت پسندوں کے خلاف ایک اور ضرب عضب شروع کرے تاکہ انہیں ہمیشہ کے لیے ختم کیا جاسکے۔

بزنس ریکارڈر کے مطابق وزارت منصوبہ بندی، ترقی اور خصوصی اقدامات کے باخبر ذرائع نے انہیں بتایا کہ چین نے اسلام آباد سے زرمبادلہ کے ذخائر کو بہتر بنانے، آئی پی پیز کی واضح ادائیگیوں، ایم ایل ون کو مرحلہ وار پائلٹ بنیادوں پر شروع کرنے اور چینی مالیاتی اداروں کے خدشات کو دور کرنے کو کہا ہے۔

چین نے ان مطالبات سے وزیر اعظم شہباز شریف کے طے شدہ دورہ بیجنگ سے چند ہفتے قبل آگاہ کیا تھا، جس کا مقصد سی پیک کے دوسرے مرحلے کے لیے زیادہ سے زیادہ حمایت حاصل کرنا، مالی سال 2024-25 کے بجٹ کی حمایت حاصل کرنا اور چین کو بجلی کے منصوبوں کے قرضوں کو ری شیڈول کرنے پر قائل کرنا اور دوطرفہ تعلقات کے دیگر اجزاء کو بہتر بنانا تھا۔

حال ہی میں وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی، ترقی اور خصوصی اقدامات احسن اقبال اور وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے امور خارجہ سید طارق فاطمی نے چین کا سرکاری دورہ کیا جس میں انہوں نے نائب وزیر خارجہ سمیت چینی حکومت کے مختلف اعلیٰ حکام سے بات چیت کی۔

نائب وزیر خارجہ نے ورکنگ لنچ کا اہتمام کیا اور نیشنل انرجی ایڈمنسٹریشن (این ای اے) کے سربراہ نے پاکستانی وفد کے لیے ضیافت کا اہتمام کیا۔ وائس چیئرمین نیشنل ڈویلپمنٹ اینڈ ریفارم کمیشن (این ڈی آر سی) نے تفصیلی اجلاس منعقد کیا۔ اور ایگزم بینک اور سائنوسور کے صدور کے ساتھ بھی تفصیلی ملاقاتیں ہوئیں۔

ذرائع کے مطابق ایم ایل ون منصوبے پر چین کے نائب وزیر خارجہ سن وی ڈونگ نے سست پیش رفت کا ذکر کیا لیکن اس کی اسٹریٹجک اہمیت کو تسلیم کرتے ہوئے کہا کہ چین پائیدار کاروباری ماڈل پر پیش رفت کرنا چاہتا ہے اور آگے بڑھنے کے لیے ’اچھے طریقے‘ تلاش کرنے کی ضرورت ہے۔

اس کی بنیادی وجہ اس منصوبے کے زیادہ مالی اخراجات کے ساتھ ساتھ پاکستان کے مجموعی قرضوں کی پروفائل اور آئی ایم ایف کی شرائط تھیں اور چینی مالیاتی ادارے اب بھی منصوبے کے تکنیکی مطالعہ کا جائزہ لے رہے تھے۔ انہوں نے تجویز دی کہ ایک طریقہ یہ ہے کہ اس منصوبے کو آزمائشی بنیادوں پر مرحلہ وار طریقے سے نافذ کیا جائے۔

کے کے ایچ ری الائنمنٹ فیز ٹو منصوبے کے بارے میں چینی نائب وزیر خارجہ نے کہا کہ دونوں ممالک خنجراب پاس کو سال بھر سامان کی آمد و رفت اور تجارت کے تسلسل کے لئے ہر موسم میں اسٹریٹجک روٹ بنانے کے لئے پرعزم ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ چین جانتا ہے کہ داسو اور دیامیر بھاشا ڈیموں کی ترقی سے کے کے ایچ کا ایک خاص حصہ پانی میں ڈوب سکتا ہے جس سے رابطہ متاثر ہوسکتا ہے۔ اس تناظر میں ، کے کے ایچ کی تشکیل نو کے منصوبے نے زیادہ اہمیت حاصل کرلی تھی۔ ان کے مطابق چین نے پاکستان کے ساتھ فریم ورک معاہدے کا مسودہ تیار کیا اور اس پر جلد اور مثبت غور و خوض کی امید ظاہر کی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ آئی پی پیز کی بقایا ادائیگیوں کے حوالے سے انہوں نے جلد از جلد تصفیے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ کوہالہ اور آزاد پتن ہائیڈرو پاور پروجیکٹس (ایچ پی پی) سمیت قابل تجدید توانائی کے منصوبوں کو اضافی فنڈز مختص کرنے اور انشورنس کوریج فراہم کرنے کے لیے چینی مالیاتی اداروں کا اعتماد بحال کرنا ضروری ہے۔

پاکستان پر چینی آئی پی پیز کے 500 ارب روپے واجب الادا ہیں۔ وزیر اعظم پہلے ہی وزیر خزانہ کو ہدایت کر چکے ہیں کہ وہ ان بھاری واجبات کا حل تلاش کریں۔

جہاں تک سیکیورٹی کا تعلق ہے، سن ویڈونگ نے بلوچ لبریشن آرمی – مجید برگیڈ، ٹی ٹی پی اور دیگر عسکریت پسند قوتوں کے خلاف ایک اور ضرب عضب کی ضرورت پر زور دیا تاکہ انہیں ہمیشہ کے لیے کچل دیا جائے۔

چین کی جانب سے یہ مطالبہ سوات کے قریب ایک خودکش حملے میں اسکے شہریوں کی ہلاکت کے بعد سامنے آیا ہے۔ حکومت نے حملے میں ہلاک ہونے والے چینی شہریوں کے ورثاء کو 2.58 ملین ڈالر کا معاوضہ ادا کرنا ہے۔ حکومت کا دعویٰ ہے کہ اس نے حملے میں شامل تقریبا ایک درجن دہشت گردوں کو گرفتار کیا ہے۔

چین کے نائب وزیر خارجہ نے کہا کہ چین افغان حکام پر زور دیتا رہا ہے کہ وہ جامع حکومت کے ذریعے گورننس کو بہتر بنائیں اور معاشی نمو اور ترقی پر توجہ مرکوز کریں اور ساتھ ہی افغانستان سے داعش، داعش کے پی اور ای ٹی آئی ایم جیسی تنظیموں سے پیدا ہونے والے دہشت گردی کے خطرے سے نمٹیں جو چین اور پاکستان دونوں کے مشترکہ دشمن ہیں۔

انسداد دہشت گردی کے اقدامات پر بہتر ہم آہنگی کے لئے پاکستان، چین اور افغانستان کے درمیان سہ فریقی میکانزم کو بحال کرنے کی بھی ضرورت ہے۔ چین کو “دہشت گرد گروہوں کے لئے ہائی ویلیو ٹارگٹ نہیں ہونا چاہئے بلکہ چینی کارکنان پاکستان میں اعلی احترام کے مستحق ہیں۔

ذرائع نے بتایا کہ بات چیت کے دوران چائنا امپورٹ ایکسپورٹ بینک (سی ای ایکس ایم) کے صدر نے وزیر منصوبہ بندی، ترقی اور خصوصی اقدامات کو یقین دلایا کہ چین دوطرفہ خلائی تعاون اور پاکستان کے ملٹی مشن سیٹلائٹ (ایم ایم ون) جس کیلئے 30 مئی 2024 کی منصوبہ بندی کی گئی ہے کو انتہائی اہمیت دیتا ہے۔ ایم ایل ون پر انہوں نے اس اسٹریٹجک منصوبے پر عمل درآمد کے لیے بینک کے عزم کا اعادہ کرتے ہوئے کہا کہ تاخیر نظر ثانی شدہ ڈیزائن اور دائرہ کار کے ساتھ ساتھ بھاری مالی اخراجات کی وجہ سے ہوئی ہے۔

انہوں نے چینی آئی پی پیز کو ادائیگیوں میں تاخیر، اسٹریٹجک منصوبوں کی مالی منظوری میں رکاوٹ، زرمبادلہ کے ذخائر کی کم سطح اور پاکستان میں کام کرنے والے چینی شہریوں کی حفاظت اور سلامتی کے لئے خطرے پر ایگزم بینک کے خدشات سے بھی آگاہ کیا۔