جھاؤ: ریاستی مظالم اور اجتماعی سزا: پانک رپورٹ

267

نوجوان نواز بلوچ کی شادی صرف دو روز قبل ہوئی تھی اور ماحول خوشی سے بھرا تھا۔ اس کی ماں، بہن، والدین اور رشتہ دار سب خوشیاں منا رہے تھے۔ نواز اور اس کی دلہن، گلشن بلوچ، ایک ساتھ اپنی نئی زندگی کے آغاز کے سپنے بن رہے ہیں۔ کراچی کے غریب بلوچ علاقے ماڑی پور سے تعلق رکھنے والے نواز نے اپنی شادی کراچی سے دور بلوچستان کے ایک دور افتادہ علاقے جھاؤ میں ایک قریبی رشتہ دار کی بیٹی کے ساتھ طے کی تھی۔ نتیجتاً، نواز کا پورا خاندان وہاں کا سفر کر چکا تھا اور ابھی تک اس علاقے میں مقیم تھا۔

گھر واپسی کی تیاریاں جاری تھیں کہ 19 فروری 2014 کی صبح ایک ناخوشگوار واقعہ پیش آیا۔ کسی بھی دوسری صبح کی طرح، رہائشی ابھی بھی اپنی نیند سے باہر نکل رہے تھے جب ہیلی کاپٹروں کی آواز نے امن کو تہہ و بالا کر دیا۔ جیسے ہی ہیلی کاپٹر سر کے اوپر منڈلا رہے تھے، سینکڑوں فوجی ٹرک کوہڑو کے چھوٹے سے گاؤں پر اترے۔ کچھ فوجیوں نے نواز کے گھر میں گھس کر گلشن کے سامنے اسے گولی مار کر قتل کر دیا۔

دوسری جانب کوہڑو سے تھوڑے فاصلے پر واقع قریبی گاؤں ملائی گزی بھی اس پرتشدد کارروائی سے متاثر ہوا۔ فوجی ہیلی کاپٹروں کی شیلنگ سے اسکول ٹیچر نور محمد بلوچ سمیت چار بلوچ شہید ہو گئے۔

ضلع آواران کا تاریخی پس منظر :

جھاؤ ضلع آواران کی ایک تحصیل ہے۔11 نومبر 1992 سے پہلے آواران انتظامی طور پر ضلع خضدار کا حصہ تھا۔ تاریخی طور پر کولواہ کے نام سے، بعد میں اس کا نام آواران رکھ دیا گیا اور اس وقت تین تحصیلیں اور ایک سب تحصیل پر مشتمل ہے: تحصیل آواران، تحصیل جھاؤ، تحصیل مشکے، اور سب تحصیل گیشکور۔ یہ خطہ بلوچستان کے دیگر اضلاع سے پسماندہ تر ہے اور ریاستی جبر کی وجہ سے چیلنجز کا سامنا ہے۔ جنوبی بلوچستان میں واقع، آواران جنوب مغرب میں گوادر کے ساحلی علاقے، مشرق اور جنوب میں ضلع لسبیلہ، شمال میں ضلع خاران، اور مغرب میں کیچ اور پنجگور کے اضلاع سے ملحق ہے، شمال مشرق میں خضدار واقع ہے۔

حالیہ مردم شماری کے مطابق ضلع آواران کی کل آبادی 178,958 ہے۔ جھاؤ کے رہائشیوں کی اکثریت خط غربت سے نیچے زندگی گزار رہی ہے۔ علاقے میں بنیادی ذریعہ معاش زمین داری اور گلہ بانی ہے۔ فوج نے زیادہ تر اسکولوں کا کنٹرول سنبھال لیا ہے، انھیں کیمپوں اور چوکیوں میں تبدیل کر دیا ہے۔ انسانی حقوق اور بنیادی سہولتوں کا فقدان ہے، جس کی وجہ سے یہ ایک انتہائی حسرت زدہ علاقہ ہے۔

اس وقت آواران میں ریاستی جبر اور جاری فوجی کارروائیوں کی وجہ سے ہزاروں خاندان بے گھر ہو کر اندرونی طور پر بے گھر افراد (IDPs) بن گئے ہیں۔ بہت سے لوگ ایران اور افغانستان میں پناہ گزین کی زندگی گزارنے پر مجبور ہیں، حالانکہ موجودہ مردم شماری میں اس کی عکاسی نہیں ہوتی۔ بلوچ نیشنل موومنٹ کے محکمہ سماجی بہبود کے مطابق، ضلع آواران سے تعلق رکھنے والے 1460 افراد اس وقت ایران کے زیرانتظام مغربی بلوچستان میں مقیم ہیں۔ جبکہ، آواران سے نقل مکانی کرنے والے بہت سے خاندان سندھ اور بلوچستان کے دیگر اضلاع میں مختلف مقامات پر بھی آباد ہو گئے ہیں۔

شہدائے دومگ جھاؤ سال 1971

عطا محمد ولد خرینہ
محبت خان، ولد خرینہ
محمد حسن ولد چٹھہ
موسی ولد چھٹہ
محمد کریم ولد مسکان
نیٹو
بی بی سومری بنت دلمراد
بی بی پیراڑی بنت عیسیٰ
اللہ بخش ولد موسیٰ
مرید ولد موسیٰ
مراد بخش ولد موسیٰ
علی جان ولد بیبرگ جو مشکے سنیڑی کے رہائشی ہے جس کو پاکستانی فوج نے ایک قریبی رشتہ دار کے ساتھ مشکے زوارک کے مقام پر شہید کیا۔

حالیہ برسوں میں، فوجی آپریشنز کا آغاز 2013 میں ہوا، پہلا آپریشن 19 اپریل 2013 کو ہوا، اس آپریشن کے دوران بلوچ نیشنل موومنٹ کی مرکزی کمیٹی کے رکن اور ایک بلوچ عالم استاد علی جان کو پاکستانی فوج نے قتل کر دیا۔ اس کے بعد دوسری کارروائی کے نتیجے میں پاکستانی فوج کے ہاتھوں پانچ بے گناہ افراد ہلاک ہوئے۔ ان واقعات کے بعد ایسی کارروائیاں روز کا معمول بن گئیں۔

19 فروری 2014 کو جھاؤ میں ریاستی بربریت اور تشدد:

پاکستانی فضائیہ اور زمینی افواج نے 19 فروری 2014 کو ضلع آواران کی تحصیل جھاؤ کے علاقے ملائی گزی میں مشترکہ طور پر جارحیت کی۔ آپریشن کے دوران مردوں اور بچوں کو بھی نشانہ بنایا گیا۔ ملائی گزی ایک گاؤں ہے جو پچاس گھروں پر مشتمل ہے جو گزی ندی کے کنارے یونین کونسل کورک میں واقع ہے۔

عینی شاہدین کے مطابق ’’لوگ اپنی نیند سے پوری طرح بیدار نہیں ہوئے تھے کہ ہیلی کاپٹروں کی آواز سے ان کی آنکھ کھلیں۔ وہ فضا میں ہیلی کاپٹروں اور زمین پر سینکڑوں ٹرکوں پر مشتمل فوجی قافلوں کے محاصرے میں تھے۔ لوگ اس معاملے کو اچھی طرح سمجھنے سے قاصر تھے کہ فوج گھروں میں گھسنے لگی اور چلا کر لوگوں کو کہتی رہی کہ گھروں سے نہ نکلیں اور اگر کسی نے بھاگنے کی کوشش کی تو اسے مار دیا جائے گا۔ لیکن گھر میں رہنے سے بھی کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ کچھ فوجی نواز کے گھر میں داخل ہوئے اور اسے نوبیاہتا دلہن اور والدین کے سامنے گولی مار دی۔ دوسری جانب ملائی گزی میں پاکستانی فوج کے ہیلی کاپٹروں نے اپنی مشین گنوں سے فائرنگ شروع کر دی جس کی زد میں آکر 5 افراد زخمی ہوئے: اسکول ٹیچر ماسٹر نور محمد ولد ملا موسیٰ، طالب حسین ولد ملنگ، غلام جان ولد نورا اور تاج محمد ولد ہاجو۔

دوسری طرف فوج نے لوگوں کو گھیرے میں لے لیا اور ان کی آنکھوں پر پٹیاں باندھ دی، پھر انھیں ٹرکوں میں لادنا شروع کر دیا۔ ایک اور ٹیم نے گھروں کو آگ لگانا شروع کر دیا جس میں بلوچ نیشنل موومنٹ کے ایک سینئر رکن ماسٹر شہداد کا گھر بھی شامل تھا جہاں ان کا پورا خاندان اندر تھا۔ پاکستانی فوج نے بے زبان جانوروں کو بھی نہیں بخشا، کئی مکینوں کے باڑوں میں بند مویشیوں کو زندہ جلا دیا۔

ہلاک شدگان کی لاشیں فوج نے تحویل میں لے لیں۔ عینی شاہدین کے مطابق فوج نے لاشیں ورثاء کے حوالے نہیں کیں۔ اس کے بجائے، انھوں نے لاشوں کو یوسف کور (ندی) میں پھینک دیا، جو ملائی گزی گاؤں سے دس کلومیٹر دور واقع ہے۔

اس آپریشن میں 70 سے زائد افراد کو پاکستانی فوج نے حراست میں لینے کے بعد جبری طور پر لاپتہ کردیا تھا۔ چند دنوں کے بعد دیگر تمام مغویوں کو ضلع لسبیلہ اور آواران کے فوجی کیمپوں سے رہا کر دیا گیا۔ تاہم بلوچ نیشنل موومنٹ کے سینئر رکن اور بلوچی زبان کے شاعر اور مصنف حاصل حسرت ولد ملا عبدالرحمان اور طالب علم دولت ولد ملا عبدالکریم جبری طور پر لاپتہ ہیں اور تاحال پاکستانی فوج کی تحویل میں ہیں۔

پاکستانی فوج کے ہاتھوں خون کی ہولی کے اگلے ہی دن، بی بی سی اردو سروس کے نامہ نگار ریاض سہیل نے جھاؤ کا دورہ کیا اور تمام واقعات کو ایک دستاویزی فلم میں بیان کیا جو آج بھی دستیاب ہے۔ بی بی سی اردو سروس کے علاوہ بلوچ میڈیا نے بھی جھاؤ میں ہونے والے ظلم کی کوریج کی لیکن پاکستانی میڈیا میں ایک بھی خبر شائع نہیں ہوئی اور ان کے اس رویے میں آج تک کوئی تبدیلی نہیں آئی ہے۔