بی ایس او کا مرکزی قومی کونسل سیشن 2 تا 4 مارچ کوئٹہ میں منعقد ہوگا۔ چنگیز بلوچ

97

بی ایس او کے چیئرمین چنگیز بلوچ نے آج کوئٹہ پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ جدید معاشرے کے ہنگامہ خیز منظر نامے میں سرمایہ داری ایک بڑی طاقت کے طور پر کھڑی ہے جو کہ خوشحالی اور ترقی کا وعدہ کرتی ہے۔ اس کے باوجود، اس کے چمکدار چہرے کے نیچے تضادات اور بحرانوں سے بھرا ہوا ایک نظام موجود ہے، جو عدم مساوات اور استحصال کو برقرار رکھتا ہے۔ سرمایہ دارانہ نظام پر ایک انقلابی تنقید اس نظام کی بنیادی خامیوں کو بے نقاب کرتی ہے جو زیادہ سے زیادہ منافع اور کمموڈیفکیشن پر مبنی ہے اور انسانی فلاح و بہبود پر جمع کرنے کو ترجیح دینے کے رجحان پر روشنی ڈالتا ہے۔ مالیاتی بحران سے لے کر ماحولیاتی انحطاط تک، سرمایہ دارانہ نظام کے بحران اس کی غیر پائیدار نوعیت کی دردناک یاد دہانی کے طور پر کام کرتے ہیں، جو بنیادی تبدیلی اور متبادل سماجی و اقتصادی ماڈل کے مطالبے کو ہوا دیتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ حالیہ بحرانات کے تناظر میں دیکھا جائے تو تقریباً دنیا بھر میں ایک ارب کے قریب لوگ خط غربت سے نیچے زندگی گزار رہے ہیں جبکہ ان میں سے 4 کروڑ لوگوں کا تعلق ازخود عالمی سامراج امریکہ سے ہے۔ سرمایہ دارانہ نظام کے باعث آج دنیا بھر میں کروڑوں لوگ روزگار، تحفظ، ضروریات صحت، تعلیم و دیگر بنیادی ضروریات سے محروم ہیں۔ موجودہ نظام کے سیاسی و معاشی بحرانات نے نہ صرف نام نہاد تیسری دنیا کے ممالک کو اپنی لپیٹ میں لے چکے ہیں بلکہ ترقی یافتہ ممالک فرانس، جرمنی اور نیدرلینڈز جیسے ممالک میں بھی مسلسل کسانوں اور محنت کشوں کی بنیادی ضروریات زندگی کے مطالبوں کے گرد اس نظام کی بوسیدگی کے خلاف اپنے غم و غصے کا اظہار عوامی تحریکوں کی صورت میں کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ عام لوگوں کی مایوسیوں کی گونج میں بڑے پیمانے پر ہونے والے مظاہروں کے درمیان، افراط زر نے اپنی گرفت مضبوط کر لی ہے، جس سے لاکھوں لوگوں کا ذریعہ معاش متاثر ہو رہا ہے۔ قومی ریاستیں، جو بظاہر اپنے شہریوں کی حالت زار سے لاتعلق نظر آتی ہیں، وسائل کو جنگی مشینری کی انتھک دوڑ میں موڑ دیتی ہیں۔ چونکہ رہائش کی کمی برقرار ہے، بے روزگاری کی شرح میں اضافہ ہو رہا ہے، اور صحت کی دیکھ بھال بہت سے امریکیوں کےلیے ایک حق کے بجائے ایک استحقاق بنی ہوئی ہے، حکومتی ترجیحات کا تضاد واضح طور پر واضح ہو جاتا ہے. اگرچہ داخلی مسائل حل نہیں ہوئے ہیں، اربوں ڈالر غیر ملکی امداد کے خزانے میں آسانی سے بہہ رہے ہیں، جو یوکرین اور اسرائیل جیسی جگہوں پر جنگ کی مشینری کو ہوا دے رہے ہیں، یہ سرمایہ دارانہ نظام کی علامت ہے جس میں اپنے ہی لوگوں کی فلاح و بہبود پر منافع کو ترجیح دی جاتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ جیسے جیسے سامراجی طاقتیں اندر سے کھوکھلی ہوتی جا رہی ہیں، ان کے اقدامات انسانیت اور قومی مفادات کو نظر انداز کر رہے ہیں۔ امریکی معیشت میں 33 ٹریلین ڈالر کے اندرونی قرضوں کے بوجھ تلے دب جانے کے باوجود افریقہ اور مشرق وسطیٰ جیسے خطوں میں تنازعات کو ہوا دینے کے لیے کافی وسائل بروئے کار لائے جا رہے ہیں۔ یہ واضح عدم اتفاق مالی بحران میں ڈوبی ہوئی اور ہتھیاروں سے بھری ہوئی سرمایہ دارانہ اصولوں پر قائم قومی ریاستوں کی غلط ترجیحات کی نشاندہی کرتا ہے، جو اس کے اقدامات کی سماج و انسانیت دشمن نوعیت کی نشاندہی کرتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ دور میں نوآبادیات مخالف عوامی تحریکوں کا دوبارہ ابھرنا واضح ہے، جو موجودہ نظام کے خاتمے کا اشارہ ہے۔ چاہے وہ افریقہ میں نوآبادیات مخالف ملیشیاؤں کا عروج ہو یا یورپی کسانوں سمیت محروم گروہوں کا بڑے پیمانے پر متحرک ہونا، موجودہ نظام پر ایک اجتماعی خطرہ منڈلا رہا ہے۔ سماجی ناانصافی کی گہرائیوں سے جنم لینے والی یہ تحریکیں جبر کے ڈھانچے کو ختم کرنے اور مساوات اور آزادی کی ایک نئی صبح کی راہ ہموار کرنے کےلیے تیار ہیں۔

مزید کہا کہ سیاسی کارکنوں کے لیے ضروری ہے کہ وہ اس خوفناک حقیقت کو تسلیم کریں، اس مضبوط نظام کو ختم کرنا کوئی تیز یا سیدھا کام نہیں ہوگا۔ اپنی موجودہ کمزوری اور فطری بربریت کے باوجود یہ نظام لاکھوں قربانیوں کی قیمت پر بھی اقتدار کو برقرار رکھنے کے اپنے عزم پر قائم ہے۔ یہ مسلسل بھوک اور جنگ کے چکر کو غیر متزلزل جوش و جذبے کے ساتھ جاری رکھتا ہے۔ غزہ اور یوکرین میں جاری مظالم جبر اور تشدد کے خلاف اس غیر متزلزل عزم کی یاد دلاتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سیاسی کارکنوں کو اس بات کو بھی تسلیم کرنا ہوگا کہ استعمار کو شکست دینے کے لیے محتاط تنظیم اور واضح نوآبادیات مخالف نظریے و وسیع تر پروگرام کے ساتھ ثابت قدم وابستگی کی ضرورت ہے۔ ان اہم عناصر کے بغیر سامراجی قوتیں مسلسل عوامی تحریکوں کو ختم کر دیں گی اور انہیں افراتفری اور خانہ جنگی کی طرف لے جائیں گی۔ عرب بہار کی دردناک مثال اس حقیقت کا ثبوت ہے، جہاں تبدیلی کی ابتدائی امنگوں کو تیزی سے ختم کر دیا گیا، جس نے معاشروں کو افراتفری میں دھکیل دیا۔ نوآبادیاتی جبر کے خلاف مزاحمت کے خطرناک سفر کو آگے بڑھانے میں مقصد کی وضاحت، مٶثر تنظیم اور نوآبادیاتی مخالف اصولوں کی غیر متزلزل پاسداری ناگزیر ہے۔

انہوں نے کہا کہ تاریخی طور پر جنگی معیشت پر انحصار کرنے والا پاکستان اب ایک ناکام ریاست کی علامت بن چکا ہے۔ اس کی جدید شکل 18 ویں صدی کی شاہی ریاست کے بدترین پہلوؤں سے مماثلت رکھتی ہے۔ ریاستی اداروں میں موثر فیصلہ سازی کی صلاحیت کا فقدان ہے، جبکہ ان کی مبینہ ادارہ جاتی سالمیت ناقابل شناخت حد تک ختم ہو چکی ہے۔ مقبوضہ علاقوں کو اسٹیبلشمنٹ نے آپس میں تقسیم کر رکھا ہے جس سے بنیادی انسانی حقوق بشمول شہری بالادستی، اظہار رائے کی آزادی اور اجتماعی آزادیوں کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے۔
مزید برآں، ریاست کی جنگی معیشت کے زوال اور غیر ملکی فنڈز کی واپسی، جو جنگی کوششوں کے لیے امداد کا روپ دھارتی ہے، نے بیوروکریسی اور ریاست کے اندر حکمران طبقوں کے درمیان تناؤ میں اضافہ کیا ہے۔ عوامی مزاحمت میں اضافے کے بجائے حکمران اشرافیہ کے درمیان اندرونی تنازعات شدت اختیار کر چکے ہیں۔ گزشتہ پانچ سالوں میں اقتدار کی کشمکش، جو فوجی-سول تناؤ اور فوجی-عدلیہ کے تصادم کی علامت ہے، اس معاشی زوال کے براہ راست نتائج ہیں۔ یہ تضادات مزید بڑھنے والے ہیں، خاص طور پر پنجاب میں بڑے پیمانے پر بدامنی کی وجہ سے، ایک ایسی صورتحال جسے نہ تو ریاست اور نہ ہی اس کے ادارے نظر انداز کرنے کے متحمل ہوسکتے ہیں۔ مستقبل قریب میں براہ راست خانہ جنگی اور اندرونی لڑائی کا خطرہ منڈلا رہا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ کئی دہائیوں سے بلوچ عوام نوآبادیاتی اور استحصالی پالیسیوں کا خمیازہ بھگت رہے ہیں اور ریاست کی جنگی معیشت یا اس کی مبینہ “بدمعاش جمہوریت” سے متاثر ہورہے ہیں۔ اپنی نوآبادیاتی پیشروؤں کی طرح حکمران اشرافیہ نے بھی بھوک، غربت، قید و بند، جبری گمشدگیوں، اذیتوں اور انحطاط کا بیانیہ ترتیب دیا ہے جس سے بلوچ عوام کا مقدر سنگین ہو گیا ہے۔ ظلم و بربریت کا یہ سلسلہ مسلسل جاری ہے جس نے بلوچ عوام کو ناقابل بیان مصائب اور ذلت کا نشانہ بنایا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بلوچ عوام کی استقامت اس وقت نمایاں ہوتی ہے جب انہوں نے شروع سے ہی اپنے اوپر مسلط کردہ نوآبادیاتی نظام کا ڈٹ کر مقابلہ کیا ہے اور ظالم کی پہلے سے طے شدہ تقدیر کو غیر متزلزل عزم کے ساتھ مسترد کردیا ہے۔ ہزاروں گمشدگیوں اور بے شمار مسخ شدہ لاشوں کو دیکھنے کے باوجود ظلم کے خلاف انکار کا جذبہ آج تک برقرار ہے۔

مزید کہا کہ شہید بالاچ مولا بخش کی شہادت افسوسناک طور پر ظالم کے منشور کے تانے بانے میں بندھی ہوئی تھی، لیکن اس ناانصافی کے خلاف بلوچ مزاحمت نے ان کی دائمی مخالفت کی ثقافت کا ایک دردناک اظہار کے طور پر کام کیا۔ حالیہ قومی تحریک میں بلوچ ثقافت مزاحمت کے خوبصورت مظاہر کے ساتھ پروان چڑھی ہے اور مصائب کے سامنے خاموش ہونے سے انکار کر رہی ہے۔ جبر کو خاموشی سے قبول کرنے سے انکار قومی مزاحمتی کلچر کے اندر ایک مضبوط حفاظتی محاذ کی بنیاد رکھ رہا ہے، جو مستقبل کےلیے ایک طاقتور قوت کو یقینی بنا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جس تناسب سے سامراجی جبر میں اضافہ ہوا ہے تو اس کے برابر غم و غصہ مختلف تحریکوں کی شکل میں اپنا اظہار کررہا ہے۔ٹارچر سیل، جیل و زندان سمیت بلوچ قوم اپنے حقوق کے تحفظ کیلئے بر سر جہد رہے گی، کنٹانی میں بارڈر ٹریڈ کی بندش ہو یا کھڈکوچہ میں بجلی کی عدم فراہمی کی بنیاد پر بڑے پیمانے پر باغات کا سڑھ جانے کے خلاف آئے روز کی ہڑتالیں کسی نہ کسی طرح اس نظام کے خلاف اپنا اظہار کررہی ہیں آج دریا سندھ سے لیکر مکران تک بلوچ نے یک مشت ہوکر اپنا فیصلہ اس نظام کے خلاف دے دیا ہے جب عوام کے اندر غصہ اپنے عروج پر ہو وہ کسی بھی طرح سے مزاحمت کا پہلو اپنائے تو دوسرا اہم فریضہ سیاسی کارکن پر عائد ہوتا ہے کہ وہ ان پاک پوتر اور نیک جذبات کو حقیقت کا رنگ دے کر عوام کو نجات کا راستہ دکھاتا ہے اور ان کی صف بندی کرکے انھیں مزاحمت کا ایک بلند مینار بنا کر ظالم و غاصب کے سامنے بر سرپیکار کردیتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بی ایس او اپنے اول دن سے لیکر آج تک اس قول و فعل پر قائم ہے کہ بلوچ قوم کو گھر گھر اس نامیاتی بحران میں دھنسے نظام کے خلاف شعور دینا اور عام بلوچ عوام سے اپنے سماج کےلیے قیادت تراش کر انقلابی جدوجہد میں دھکیلنا اپنا فریضہ سمجھا ہے آج بھی اسی بات پر مستقل مزاجی کے ساتھ قائم ہے۔

بی ایس او چیئرمین نے کہا کہ تنظیم نے جنوری میں مرکزی کونسل سیشن کرنے کا اعلان کیا تھا جو بلوچ نسل کشی کے خلاف چلنے والی تحریک کی وجہ سے ملتوی کیا گیا، البتہ مرکزی کمیٹی کے حالیہ اجلاس میں 2 سے 4 مارچ کو سیشن کے انعقاد کا فیصلہ کیا گیا ہے جو قومی تحریک میں ایک موثر کردار ادا کرے گا ۔