پاکستان کے ساتھ ایک لمبی لڑائی جاری ہے – ڈاکٹر اللہ نذر

1371

ہر تنظیم میں مختلف آراء کے لوگ ہوتے ہیں، ہماری تنظیم میں ہر ایک کو رائے دینے کا حق حاصل ہے آمرانہ سوچ یا قیادت نہیں ہے۔

ان خیالات کا اظہار بلوچستان لبریشن فرنٹ (بی ایل ایف) کے سربراہ ڈاکٹر اللہ نذر نے بی بی سی اردو سروس کے نمائندے ریاض سہیل سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔

بی بی سی میں شائع ہونے والے بلوچ مسلح تنظیموں کے اتحاد کے حوالے سے رپورٹ میں ڈاکٹر اللہ نذر نے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ انضمام یا اتحاد کی کوششیں شروع سے رہی ہیں اور اس میں کامیابی اور پیشرفت بھی ہوئی ہے، سب جماعتیں اور تنظیمیں ایک ہی مقصد کے لیے جدوجہد کر رہی ہیں، آزادی سب کا بنیادی مقصد اور منزل ہے تو پھر ہماری طاقت کیوں نہ ایک ہو۔

ڈاکٹر اللہ نذر نے مزید کہا کہ انہوں نے اتحاد کے لیے دوستوں کے ذریعے بیرون ملک مقیم قیادت کو بھی تنظیم میں شمولیت کی دعوت دی ہے کیونکہ ان کی کوشش ہے کہ سب ایک ہوں اور اپنے مقصد کے لیے جدوجہد کریں۔

ممکنہ مشترکہ تنظیم کے نام کے بارے میں ڈاکٹر اللہ نذر کہتے ہیں کہ براس سمیت کوئی بھی نام ہوسکتا ہے جسے دوستوں اور تنظیمی اداروں کی مشاورت کے بعد طے کیا جاسکتا ہے۔

بی ایل ایف کے سربراہ ڈاکٹر اللہ نذر نے کہا کہ ہر تنظیم میں مختلف آرا کے لوگ ہوتے ہیں، ان کی تنظیم میں ہر ایک کو رائے دینے کا حق حاصل ہے آمرانہ سوچ یا قیادت نہیں ہے۔ پارٹی ڈسپلن، اداروں کی ترقی اور اہمیت کی وجہ سے پاکستان کے ساتھ ایک لمبی لڑائی جاری ہے۔