ایران کو اقوام متحدہ میں خواتین کے کمیشن سے نکالا جا سکتا ہے

106

ایرانی حکام کی جانب سے رواں سال ستمبر میں نوجوان کرد لڑکی مہسا امینی کی پولیس کی حراست میں تشدد سےموت اور اس کے بعد شروع ہونے والے مظاہروں کے خلاف روا رکھے جانے والے جبر کے بعد اقوام متحدہ نے ایران کو خواتین کے کیمشن سے نکالنے کا عندیہ دیا ہے۔

باخبر سفارت کاروں نے اطلاع دی ہے کہ اقوام متحدہ کی اقتصادی اور سماجی کونسل 14 دسمبر کو ایران کو اقوام متحدہ کے خواتین کے کمیشن سے خارج کرنے کی امریکی مسودہ قرارداد پر ووٹ ڈالے گی۔اس قرارداد کا تعلق صنفی مساوات اور خواتین کو بااختیار بنانے سے ہے۔ یہ قرارداد ایک ایسے وقت میں پیش کی جا رہی ہے جب واشنگٹن تہران پرخواتین کے حقوق سے محروم کرنے اوراحتجاج کو وحشیانہ طریقے سے دبانے پر تہران پر پابندیاں عاید کرنے کی کوشش کررہا ہے۔

اقوام متحدہ کے ایک سفارت کار نے وضاحت کی کہ امریکا اور دیگر ممالک ایران کو عورت کے بھیس سے ہٹانے کے لیے حمایت کو متحرک کرنے کے لیے گہرے رابطے کر رہے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ وہ کامیابی حاصل کر رہے ہیں۔ کچھ ممالک جو پہلے ہچکچا رہے تھے کہ 54 رکنی اقتصادی اور سماجی کونسل نے بعد میں ووٹنگ کی کہ آیا ایران کوکمیشن سے نکال دیا جائے یا نہیں۔

قابل ذکر ہے کہ امریکا نے پیر کو اس اقدام سے متعلق ایک مسودہ قرارداد تقسیم کیا تھا جس میں ایران کی پالیسیوں کو “خواتین اور لڑکیوں کے حقوق اور خواتین کی حیثیت سے متعلق کمیشن کے مینڈیٹ سے صریح طور پر متصادم” قرار دیا گیا
تھا۔

ایران نے ابھی 45 رکنی باڈی میں اپنی مدت شروع کی تھی جس کا اجلاس ہر سال مارچ میں ہوتا ہے اور اس کا مقصد صنفی مساوات کو فروغ دینا اور خواتین کو بااختیار بنانا ہے۔ ایران کی رکنیت کی مدت 2026 تک ہے۔
تاہم مذہبی پولیس کے ہاتھوں گرفتاری کے بعد 22 سالہ امینی کی موت کے بعد سے ملک میں ہونے والے مظاہروں نے ملکی غصے اور بین الاقوامی تنقید کو جنم دیا ہے