بیٹے کی بازیابی کے لئے حکام کردار ادا کریں۔ والد، گرفتار ایف سی اہلکار

866

بلوچ لبریشن آرمی کے ہاتھوں گرفتار ایف سی اہلکار کلیم اللہ کے والد نے ویڈیو پیغام جاری کرتے ہوئے پاکستان کے اعلیٰ حکام سے درخواست کی ہے اس کے بیٹے کی بازیابی کے لیے کردار ادا کریں۔

جاری کردہ ویڈیو میں کلیم اللہ کے والد کا کہنا ہے کہ کلیم اللہ چھٹیاں ختم کرکے واپس جارہا تھا کہ اسے اغواء کیا گیا اب ہمیں پتہ نہیں وہ کہاں اور کس حال میں ہے۔

انہوں نے پاکستان کے وزیر اعظم، آرمی چیف، آئی جی ایف سی اور وزیر اعلیٰ بلوچستان سے درخواست کی ہے وہ کلیم اللہ کی بازیابی کے لئے کردار ادا کریں۔

خیال رہے کہ گذشتہ مہینے بلوچ لبریشن آرمی نے پاکستان فوج کے دو اہلکاروں کی حراست میں لینے کی ذمہ داری قبول کی تھی۔

ترجمان جیئند بلوچ نے کہا کہ یہ کاروائی خفیہ معلومات پر بی ایل اے کے اسپیشل ٹیکٹیکل آپریشنز اسکواڈ نے کی۔

بلوچ لبریشن آرمی کے ترجمان جیئند بلوچ نے میڈیا کو جاری ایک بیان میں کہا تھا کہ بی ایل اے کے سینئر کمانڈ کونسل نے اس بات کی منظوری دی ہے کہ بین الاقوامی کنونشنز اور عالمی جنگی اصولوں کی پاسداری کرتے ہوئے، پاکستانی فوج کے ساتھ قیدیوں کے تبادلے کا عمل شروع کیا جاسکتا ہے۔

تاہم حکومتی سطح پر قیدیوں کے تبادلے کے حوالے سے تاحال کوئی موقف سامنے نہیں آیا ہے جبکہ انکے اہلخانہ مظاہروں کیساتھ حکام سے اپیل کررہے ہیں۔

گرفتار فورسز کلیم اللہ کے لواحقین و علاقہ مکینوں نے کل اس حوالے سے احتجاجی مظاہرے کا اعلامیہ جاری کیا ہے۔