پاکستانی فوج عالمی امداد کو انسانیت کے خلاف استعمال کرتی ہے – بی این ایم

159

بلوچ نیشنل موومنٹ کے انفارمیشن سیکریٹری قاضی داد محمد ریحان نے  سانحہ زیارت کے پس منظر میں کیے گئے پریس کانفرنسمیں آئی ایم ایف کے منیجنگ ڈائریکٹر کرسٹالینا جارجیوا سے اپیل کی ہے کہ چونکہ پاکستان بلوچستان میں انسانی حقوق کی سنگینخلاف وزری کر رہا ہے اس لیے آئی ایم ایف سمیت دیگر مالیاتی ادارے اس کی مدد نہ کریں۔

انھوں نے بدھ کے روز ایک آنلائن پریس کانفرنس میں کہا پاکستان کو جب بھی عالمی براداری کی طرف سے مالی مدد ملی اس کیفوج نے اس امداد کو بلوچ عوام کے خلاف استعمال کیا۔آج آئی ایم ایف سمیت دیگر مالیاتی اداروں اور ممالک کو یہ بھی دیکھناچاہیے کہ ان کی طرف سے امداد حاصل کرنے والا ملک انسانیت کے خلاف جرائم میں ملوث نہیں۔کیا پاکستان کے یہ جرائم کافی نہیں  ہیں  کہ ان کی بنیاد پر بین الاقوامی برداری اس کے خلاف مالیاتی پابندیاں عائد کرے تاکہ اسے اپنے کیے کی سزا مل سکے؟

انھوں نے کہا انسانی حقوق کے عالمی ادارے بھی اس بات کو تسلیم کرتے ہیں کہ بلوچستان میں جبری گمشدگی ایک ایسی سچائیہے کہ جسے جھٹلایا نہیں جاسکتا۔پاکستان میں انتظامی، سیکورٹی اداروں اور عدلیہ کے سربراہان اس بات کا مختلف فورم پر اظہارکرچکے ہیں کہ بلوچ قومی سیاسی کارکنان کو اس لیے جبری لاپتہ کیا جا رہا ہے کہ وہ بلوچستان کی آزادی کی جدوجہد سے منسلکہیں۔بلوچستان میں پاکستان کے  طفیلی سیاستدان بھی بارہا کہہ چکے ہیں کہ جبری لاپتہ افراد کے مسئلے کا بلوچستان کی تحریکسے آزادی سے تعلق ہے۔پاکستانی فوج نے اپنی ریاست کی نام نہاد سول حکومت اور عدلیہ کو یہ باور کرایا ہے کہپاکستان کے بقاکے لیے یہ لازم ہے کہ بلوچ قومی سیاسی کارکنان کو جبری لاپتہ کیا جائے کیونکہ پاکستانی فوج ان پر لگائے گئے الزامات کو عدالتمیں ثابت کرنے کے اہل نہیں۔ اس لیے درپردہ پاکستان کی حکومت اور عدلیہ نے پاکستانی فوج کو جبری گمشدگیوں کی کھلی چھوٹدے رکھی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ صرف عالمی ادارے ہی پاکستان کے ان جرائم کو روک سکتے ہیں۔

قاضی ریحان نے کہا کہ ہم  تمام عالمی مالیاتی اداروں ، اقوام متحدہ کے تمام رکن ممالک اور بالخصوص آئی ایم ایف کے منیجنگڈائریکٹر محترمہ کرسٹالینا جارجیوا سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ پاکستان کی مالی مدد سے گریز کریں اور اس پر دباؤ ڈالیں کہ وہبلوچستان میں جبری گمشدہ افراد کو منظرعام پر لاکر جبری گمشدگیوں کے سلسلے کو فوری ختم کرئے۔

یہ پریس کانفرنس گذشتہ روز پاکستانی فوج کے ہاتھوں زیرحراست قتل کیے گئے 9 بلوچ جبری لاپتہ افراد کے قتل کے پس منظر میںکیا گیا۔

پریس کانفرنس میں بی این ایم کے نفارمیشن سیکریٹری کا کہنا تھا گذشتہ روز ہم نے جبری لاپتہ افراد کے ماورائے قانون و عدالتحراستی قتلکا بدترین مشاہدہ کیا۔پاکستانی فوج نے ایک ایسی حرکت کی ہے جس کی اس کی تاریخ میں شاید مثال موجود ہو لیکنجدید ریاستوں میں اس طرح کی مثال ملنی مشکل ہے۔ایک پیشہ ور ریاستی فوج سے جس کا پاکستانی فوج ہمیشہ دعوی کرتی ہےدنیا کو یہی توقع ہے کہ وہ اپنی ریاستی قوانین کے دائرے میں اپنے فرائض انجام دے گی۔ کسی بھی فورس سے یہی امید کی جاتیہے کہ وہ قانون کی رکھوالی کرئے گی لیکن پاکستانی فوج سے کسی مثبت چیز کی توقع رکھنا اپنے آپ کو دھوکا دینا ہے۔بلوچ لبریشنآرمی نے  14 جولائی  کو پاکستانی فوج کے لیفٹیننٹ کرنل لائق بیگ مرزا   کو گرفتار کرکے ہلاک کیا۔ اس کے  ردعمل میں پاکستانی فوجنے اپنے ٹارچرسیلز میں موجود 9 جبری لاپتہ افراد کو فیک انکاؤنٹر کے ذریعے ماورائے قانون و عدالت قتل کرکے یہ دعوی کیا کہ یہافراد زیارت کے مقام پر کرنل لائق بیگ کے اغواء اور اسے مارنے میں ملوث تھے۔

قاضی ریحان کے مطابق ان افراد میں سے اب تک چھ افراد کی شناخت ہوچکی ہے ، شاہ بخش مری، شھزاد ولد خدابخش دھوار کوپاکستانی فوج نے 4 جون 2022 کو شال سے جبری لاپتہ کیا تھا، سالم  ولد کریم سکنہ ضلع پنجگور ایک طالب علم تھے، جنھیں 18 اپریل 2022 کو اس وقت گرفتاری کے بعد جبری لاپتہ کیا گیا تھا جب وہ شال جا رہے تھے۔ فزیو تھراپسٹ  ڈاکٹرمختیاربلوچ  کو شالسے 11 جون 2022 کو پاکستانی فوج نے حراست میں لے کر جبری لاپتہ کیا تھا، انجینئر اور ٹیچر زھیربلوچ ولد محمداکبر کو 7 اکتوبر 2021 کو پاکستانی فوج نے جبری لاپتہ کیا تھا جبکہ شمس ساتکزھی گذشتہ پانچ سال سے جبری لاپتہ تھے انھیں 2017 کوپاکستانی فوج نے حراست میں لے رکھا تھا۔

انھوں نے کہا  ہمارے پاس ٹھوس شواہد موجود ہیں کہ یہ  تمام افراد جبری لاپتہ تھے اورپاکستانی فوجکے زیرحراست تھے۔پاکستانی فوج نے زیارت واقعے سے منسلک کرکے ان کو اس لیےشہیدکیا گیا تاکہ ایک طرف وہ اپنی فوجیوں کے مورال کو بلندکرسکے کہ فوج اگرچہ ان کی حفاظت کی صلاحیت نہیں رکھتی مگر ان کا فوری بدلہ لینے کی اہلیت رکھتی ہے اور دوسرا مقصد یہہے کہ پاکستانی ریاست کے اس بیانیہ کو کہ جبری لاپتہ افرادپاکستانی فوج کی حراستمیں نہیں بلکہ پہاڑوں میں ہے ، جعلی ثبوتفراہم کیا جاسکے۔