اعلیٰ سطحی چینی وفد کی پاکستانی آرمی چیف سے ملاقات، تعلقات کی بحالی کا وعدہ

271
ISLAMABAD: Foreign Minister Bilawal Bhutto Zardari held delegation level talks with Yang Jiechi, Member of the Politburo of the CPC Central Committee and Director of Foreign Affairs Commission of the CPC.. INP

اعلیٰ سطح کے چینی سیاست دان یانگ جیچی نے بدھ کے روز  پاکستان کے آرمی چیف جنرل قمر باجوہ سے ملاقات کے ساتھ اسلامآباد کے اپنے دو روزہ دورے کا آغاز کرتے ہوئے دیرینہ اتحادی پاکستان کے ساتھ تعلقات کی بحالی میں مدد کرنے کا وعدہ کیا۔

آئی ایس پی آر نے جنرل ہیڈ کوارٹرز میں جنرل باجوہ سے ملاقات کے بعد کہا کہانہوں نے پاکستان کے ساتھ ہر سطح پر سفارتیتعاون میں مزید بہتری کے لیے اپنا کردار ادا کرنے کی یقین دہانی کرائی۔

مسٹر یانگ، جو چینی درجہ بندی میں اپنے عہدے کی وجہ سے صدر شی جن پنگ کے ذاتی نمائندے سمجھے جاتے ہیں، ایک اعلیٰسطحی وفد کی قیادت کر رہے ہیں جس میں نائب وزرا برائے خارجہ امور اور تجارت، چائنا انٹرنیشنل ڈویلپمنٹ کوآپریشن ایجنسی(سی آئی ڈی سی اے) کے نائب چیئرمین اور قومی ترقی اور اصلاحاتی کمیشن (این ڈی آر سی) کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل اس دورےپر ہیں جو دو طرفہ تعلقات کے ایک اہم موڑ پر ہو رہا ہے۔ غالباً اسی تناظر میں وزیراعظم پاکستان شہباز شریف نے اپنے معاونخصوصی اور پوائنٹ مین برائے خارجہ پالیسی طارق فاطمی کو ایئرپورٹ پر ان کا استقبال کرنے کے لیے بھیجا تھا۔

اپنے دورے کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے چین کے ماہرین کا کہنا ہے کہ مسٹر یانگ وزیر خارجہ وانگ یی سے بھی اونچے درجے پر ہیں۔وہ ماضی میں امریکہ کے ساتھ قومی سلامتی کے مشیروں کی بات چیت میں چین کی نمائندگی کر چکے ہیں۔ اس لیے کہا جاتا ہے کہوہ جو بھی مطالبات اور خدشات پیش کرتے ہیں اور جو بھی وعدے وہ یہاں اپنی ملاقاتوں کے دوران کرتے ہیں وہ براہ راست صدر شیکی طرف سے آتے ہوئے دیکھا جائے گا۔

چینی شہریوں پر بڑھتے ہوئے حملوں کی وجہ سے دو طرفہ تعلقات اس وقت گہرے تناؤ کا شکار ہیں۔ بیجنگ کو خاص طور پر 26 اپریلکو ہونے والے حملے کے مقدمے میں پیش رفت نہ ہونے پر تشویش ہے جس میں کراچی میں کنفیوشس انسٹی ٹیوٹ کے تین اساتذہ مارےگئے تھے۔ بتایا جاتا ہے کہ حملے میں ملوث نہ تو ماسٹر مائنڈ اور نہ ہی دیگر اہم افراد کو پکڑا جاسکا ہے۔ چینیوں نے چینی اہلکاروںاور تنصیبات کے تحفظ کے لیے نجی چینی سیکیورٹی گارڈز کی تعیناتی کی اجازت مانگی تھی۔ اگرچہ پاکستانی حکام نے اس کیاجازت نہیں دی، لیکن یہ معاملہ تاحال زیر بحث ہے۔

چینی، حکام بلوچستان لبریشن آرمی کے فدائین یونٹ مجید بریگیڈ کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل 1267 کی دہشت گردی کیپابندیوں کی فہرست میں شامل کرنے پر زور دے رہے ہیں۔ چینیوں پر ہونے والے زیادہ تر حملوں کے پیچھے بی ایل اے کے اس یونٹ کاہاتھ ہے۔

جنرل باجوہ نے اس ماہ کے شروع میں اپنے دورہ چین کے دورانفول پروف سیکیورٹیکو یقینی بنانے کے لیے فوج کے عزم کا اعادہکرتے ہوئے چینی خدشات کو دور کرنے کی کوشش کی۔ ان کی کوشش نے CPEC سیکیورٹی پر پاکستانی اعلیٰ حکام کی سنجیدگی کوظاہر کرنے میں مدد کی، لیکن چینی اس بات کا انتظار کر رہے ہیں کہ وہ الفاظ کے ساتھ عمل سے میل کھائے۔

آئی ایس پی آر نے باجوہ یانگ ملاقات پر اپنے بیان میں تاہم تجویز دی کہ چینی فریق نئے وعدوں سے مطمئن ہے۔ اس میں کہا گیا ہےکہوزارتی حکام نے پاکستان میں مختلف منصوبوں پر کام کرنے والے چینی اہلکاروں کی حفاظت اور محفوظ ماحول کی فراہمی کےلیے کیے گئے خصوصی اقدامات پر سی او اے ایس کا شکریہ ادا کیا۔

ایف او نے ایک بیان میں کہا کہ بیجنگ پاکستان میں کام کرنے والی چینی کمپنیوں کے 300 ارب روپے سے زائد کی وصولیوں کےمعاملے پر ناراض ہے۔ مسٹر یانگ نے وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری سے بھی ملاقات کی۔ دونوں فریقوں نے دو طرفہ تعلقات کے تمامپہلوؤں پر تبادلہ خیال کیا اور باہمی دلچسپی کے علاقائی اور عالمی امور پر تبادلہ خیال کیا،۔

دورے کے دوران مسٹر یانگ وزیراعظم شہباز شریف سے بھی ملاقات کریں گے۔