بلوچستان: بارشوں سے دو افراد جانبحق

302

 کوئٹہ سمیت بلوچستان کے مختلف اضلاع میں طوفانی بارشیں کوئٹہ میں دیوار اور مکان کی چھت گرنے سے خاتون سمیت دو افراد جان بحق ہو گئے، کان مترزئی کے پہاڑوں پر ہلکی برف باری بھی ہوئی متعدد اضلاع میں رہائشی مکانات کی دیواریں مہندم ہوگئیں ندی نالوں میں طغیانی سے متعدد اضلاع میں نشیبی علاقے زیر آب آگئے۔

قلات کے مقام پر سڑک پر سے سیلابی ریلے گزرنے سے کوئٹہ کراچی شاہراہ ٹریفک کے لیے بند کردی گئی۔ تربت میں تین تیل بردار گاڑیاں شاہاپ ندی میں بہہ گئیں۔نجگور کے اکثر علاقوں میں رابطے سڑکیں پانی میں بہہ گئیں۔ متعدد اضلاع میں گندم، پیاز، مرچ، بادام، سیب چیری آڑو،خوبانی اوربلیک امبرکی فصلوں اور درختوں کو شدید نقصان پہنچا ہے، بارشوں کا سلسلہ آج بھی جاری رئیگا۔ہرنائی کھوسٹ ندی میں گاڑی سیلابی ریلے میں بہہ گئی گاڑی میں سوار دو افراد کو بچالیا،صوبائی وزیر داخلہ میر ضیاء اللہ لانگو نے محکمہ پی ڈی ایم اے کو الرٹ رہنے کی ہدایات کردی ہے۔

تفصیلات کے مطابق ایران سے طوفان بارشوں کا نئی لہر بلوچستان میں داخل ہونے کے بعد جمعرات کے روزصوبائی دارالحکومت کوئٹہ، بولان،پشین،قلعہ عبداللہ ،دکی ،ہرنائی،سنجاوی، زیارت،کان مہترزئی، دالبندین، مستونگ ،آواران، جھاؤ، قلات، پنجگور، تربت سمیت بلوچستان کے متعدد اضلاع میں ہونے والی بارشوں اور ژالہ باری نے تباہی مچادی کوئٹہ کے علاقے مشرقی بائی پاس بھوسہ منڈی میں مکان کی چھت گرنے سے ایک خاتون جاں بحق ہوگئیں۔

کوئٹہ کے علاقے سریاب میں  دیوار گرنے سے عمران نامی مستری جان بحق ہوگیا مشرقی بائی پاس، مسلم اتحادکالونی، بھوسہ منڈی، گنج پیڑی، موسیٰ کالونی، خلجی کالونی، بڑیچ آباد، کیچی بیگ،کلی دیبہ، قمبرانی روڈ، ریلوے کالونی وگرونواح میں نشیبی علاقے زیرآب گئے سریاب روڈ،جان محمد روڈ،فقیر محمد روڈ میں سیوریج کانظام شدید متاثر ہوا، جس کے نتیجے میں بارش کاپانی سڑکوں اورگلیوں میں کھڑا ہوگیا ہے مختلف شاہراہیں ندی نالوں کامنظرپیش کرتی رئیں۔

بلوچستان کے ضلع قلات میں جمعرات کے روز ہونے والی بارشوں سے ندی نالے بھپر گئے۔گرانی، مرجان،مہلبی وملحقہ علاقوں میں باغات اور کھڑی فصلیں جن میں گندم پیاز،مٹر،ٹماٹر سمیت دیگر کو شدید نقصان پہنچاہے بندات سیلابی ریلے بہنے سے زمینداروں اورٹھیکداروں کو کروڑوں روپے کے نقصانات کاسامنا کرنا پڑا ہے جبکہ سیلابی ریلے کا پانی ٹیوب ویلز میں جانے سے متعدد ٹیوب ویلوں کے سمرسیبل کیبل اور ٹرانسفارز جل گئے پانی گھروں میں داخل ہونے کی وجہ سے لوگ اونچی مقامات پر چڑھ گئے۔

جبکہ رابطہ سڑکیں سیلابی ریلے میں بہنے سے ملحقہ علاقوں کازمینی رابطہ منقطع ہوا جس سے لوگوں کو شدید مشکلات کاسامنا کرنا پڑا۔ کوئٹہ کراچی قومی شاہراہ پر لیویز چیک چوکی میں پانی داخل ہوا جس سے چوکی میں موجود سامان و چوکی کو نقصان پہنچا۔ جبکہ قومی شاہراہ پر ٹریفک کی روانی سیلابی ریلیکی وجہ سے متاثر ہوئی گاڑیوں کی لمبی قطاریں لگ گئیں۔ سیلابی ریلے سے آرسی ڈی شاہراہ کوبھی نقصان پہنچا۔ سیلابی ریلے میں بہہ جانے والے موٹرسائیکل سوار کو لیویز اہلکاروں نے ریسکیو کیا۔

بلوچستان کے ضلع دالبندین کے علاقوں تالو لانڈھی اور سورگل سمیت دیگر علاقوں میں بھی جمعرات کے روز بارشوں کا سلسلہ وقفہ وقفہ سے جاری رہا۔ بلوچستان کے ضلع دکی کے علاقوں ناصر آباد،یارو،تھل اسماعیل ہوسڑئی،ناناصاحب زیارت کے علاقہ لونی اور دیگر علاقوں میں تین دن سے موسلادھار بارشوں کا سلسلہ جمعرات کے روز بھی جاری رہا۔ تین دن سے جاری بارشوں اور ژالہ باری سے تیار فصلیں مکمل طور پر تباہ ہو گئی ہیں جن میں گندم، پیاز، مرچ، بادام سمیت دیگر فصلات شامل ہیں۔

بارشوں اور ژالہ باری سے سنجاوی، موسی خیل، رکھنی،قلعہ سیف اللہ میں بڑے پیمانے پر نقصانات ہوئے ہیں، اکثر علاقوں میں ژالہ باری کی وجہ سے کھڑی فصلیں اور باغات تباہ ہو گئے ہیں بلوچستان کے ضلع پنجگور کے علاقے کیلکور، بالگتر، گچک، کلگ، پروم میں طوفانی بارشیں اور ژالہ باری سے ندی نالوں میں طغیانی آگئی کھڑی فصلیں بتاہ اکثر علاقوں کی رابطہ سڑکین پانی میں بہہ گئیں۔ شہر کے مضافاتی علاقوں میں زرعی تیار فصلیں پیاز، تربوزہ خربوز،ٹماٹر شدید متاثر ہوئے ہیں۔

بلوچستان کے ضلع تربت سمیت ضلع کیچ کے مختلف علاقوں میں ہونے والی تباہ کن بارشوں نے تباہی مچادی ہے، تربت میں بارشوں کے بعد کیچ کور ندی میں پانی کا بڑا ریلہ آنے سے میرانی ڈیم میں جمع ہوگیا جس سے ڈیم میں پہلے سے موجود پانی کے ذخیرے میں اضافہ ہوا ہے۔

تمپ میں تیزبارش کے بعد ندی نالوں میں طغیانی کے باعث متعددگھرزیرآب آگئے اور چاردیواریاں گرگئیں کجھور آم کے فصلوں کو شدیدنقصان ہواپھل آبادمیں قدیم قبرستان بہ گیا اسلم عیسی نامی شخص کا گھر گرگیا نیز شاہاپ ندی میں ایران سے آنے والی تین تیل بردارگاڑیاں لاکھوں روپے مالیت کے پٹرول سمیت بہ گئیں۔

بلوچستان کے ضلع ہرنائی وگردونواح میں بارش کے بعد ندی نالوں میں سیلابی ریلے آنے سے ہرنائی پنجاب شاہراہ پرٹریفک معطل ہوگئی ہرنائی کے علاقے کھوسٹ ندی میں گاڑی سیلابی ریلے میں بہہ گئی تاہم مقامی لوگوں نے گاڑی میں سوار دو افراد کو بچالیا، مستونگ،قلات،بولان،پشین اور دیگر علاقوں سے بھی بارش کی اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔

بلوچستان میں جاری بارشوں کے پیش نظر وزیرداخلہ و پی ڈی ایم اے میر ضیاء اللہ لانگو نے محکمہ پی ڈی ایم اے کوکسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کیلئے الرٹ رہنے کی ہدایت کی ہے۔ محکمہ موسمیات کے مطابق آئندہ 24گھنٹوں کے دوران صوبے کے بعض علاقوں میں بارش اور فضاء آبر آلود رہنے کاامکان ہے۔