آزاتی ءِ انت سرپند مریرے؟ – وسعت اللہ خان

132

مٹ: عتیق آسکوہ بلوچ

تہو، جمر، پِر، روشنائی، وشبو، خوشی، مابت ءِ نم محسوس کننگ کیرے، دُو ہم خلنگ کیرے ولے کیز کننگ کپیرے. آزاتی نا ہم اندنو کسّہ ئسے. دا اسہ رزان یا دہ بائی ہشت نا پانہ یا ڈی تیٹ تفوکو ٹیکی اس آخہ بلکن احساس نا پِن ءِ. اسہ ساہدار، اسہ سال ئنا چُنا و اسہ کور اس ہم پاننگ کیک کہ آزاتی مُد ئتون اوار سوار ءِ یا نہ.

ہراڑے دلیل اٹ آزاتی ءِ باور کریفوئی تمہ سرپند مبو آزاتی آخہ آزاتی نا دروغ ئسے. آزاتی گُٹ ئٹی شائنگ مفک، گُٹ آزات مرے تو آزاتی تینٹ باگل اٹ مونا بریک، آزاتی ءِ کس بیرفنگ کپک انتئے کہ آزاتی تینٹ اسہ زیور ئسے. آزاتی ءِ کس بے اُرا کننگ کپک، پیشن آ تنک تما تو او اُست و ملی ٹی اُرا اس ٹہیفک. ولے آزاتی نا سوختئی آن خُلبو. او تینا بے قدری و بدرَد کننگ نا بدل ءِ غلامی نا زمزیر ءِ ترند کریسہ ہلیک. ہرا زمزیر…….. بدن نا یا ملی نا؟
دادے ہم آزاتی تینٹ پائک. آزاتی ءِ گُٹّو کننگ گواچنی تینے تنٹ گُٹّو کننگ ءِ.

آزاتی زود رنج ئسے، اونا نخرہ، خڑچہ، دوست بننگ و بدبننگ نا پارہ غا پام نہ کروک آتے آزاتی تنیائی نا ڈھکال نا وادی ٹی دھکہ ایتک و دوارہ وخت وخت تینا خوشو ندارہ اس نشان تننگ نا عذاب نازل کریسہ کیک. آن آزاتی بس اسہ وار ہڈ تننگ مریک دُوارہ نہ. اسہ ریاست و چاگڑد اسیٹی آزاتی نا کچ ءِ اوننگ کن بھاز آ وڑک اریر.

ہبس نا ایسری کن و ملوکو تہو سیٹی دَم ہلنگ آزاتی ءِ. بے عقلی، کور آ دلیل و ناجوڑ آتیانبار آ خود ازیتی نا پابجولاں مننگ آزاتی ءِ. انسانی تخیل نا پرّہ غاتے شعوری وڑ اٹ کاٹ نہ کننگ آزاتی ءِ. راست پاننگ آ رَک و دروغ آ سزا و راست نا پِن آ دروغ لوجنگ ءِ بد پاننگ آزاتی ءِ. بیدس خُلیس آ پاننگ، بِننگ، اختلاف تخنگ، اختلاف ءِ شرف تننگ و اختلاف کریسہ ہم زندہ مننگ و زندہ ہِلنگ آزاتی ءِ. اگہ اسہ باغ ئسے آ آزاتی نا تختہ خلوک مرے و اوڑے بیرہ گلاب ئسے ردوم نا موکّل مرے گڑا دا باغ اس اَف بلکن بیرہ گلاب آتا جنگل ئسے۔

ہراتم آزاتی نا چنکا دائرہ غاتے اشتماعی آسودئی نا پِن آ اسہ بھلو دائرہ اسیٹی اوار کریسہ چنکا دائرہ غاتا پجّار ایسر کننگہ گڑا دُوارہ دائرہ ٹی بیرہ فسطائیت آزات پیری کننگ کیک چاہے او امرو پُچ اسیٹی بیرفوک مرے. چاہے اونا تُورہ ٹی اُست ءِ خوش کننگ کن اخس گچینو گوازی نا گڑا مریر. چاہے اونا ڈھولک تون امرو تُغ تفوک مریر. فسطائیت نا آزاتی ایلوفتیکن زمزیرِ غلامی آن بیدس ہچس اَف؟

دُنکہ اسہ ریاست اسیٹی اِرا بادشاہ مننگ کپسہ اندن اسہ چاگڑد اسیٹی یا تو آزاتی بادشاہی کننگ کیک یا غلامی. ہڑتوم آتیٹی پرامن رَک ہموتم مننگ کیک اگہ خاخر و دیر ئٹی اواری اس مننگ کے. دا اصول آن بیدس انت دلیل تننگہ او دلیلِ دلال آ بیدس ہچس اَف.
خیر ہلیبو دا خشک آ آزاتی نامہ ءِ. منہ شئر نا بند بنبو؛

ہے اور نہیں کا آئینہ مجھ کو تھما دیا گیا
یعنی میرے وجود کو کھیل بنا دیا گیا

میرا سوال تھا کہ میں کون ہوں، اور جواب میں
مجھ کو ہنسا دیا گیا ، مجھ کو رلا دیا گیا

میرے جنوں کو تھی بہت خواہشِ سیر و جستجو
مجھ کو مجھی سے باندھ کر مجھ میں بٹھا دیا گیا

میں نے کہا کہ زندگی ؟ درد دیا گیا مجھے
میں نے کہا کہ آگہی ؟ زہر پلا دیا گیا

خواب تھا میرا عشق بھی، خواب تھا تیرا حسن بھی
خواب میں یعنی ایک اور خواب دکھا دیا گیا
(احمد نوید)

(منتوار: بی بی سی اُردو)

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here