امریکی جنگی طیاروں کی بمباری سے 52 شدت پسند ہلاک

50

امریکی فورسز نے دعویٰ کیا ہے کہ صومالیہ میں جنگی طیاروں کے حملوں میں شدت پسند تنظیم الشہاب کو نشانہ بنایا گیا اور 52 جنگجووں کو ہلاک کردیا گیا۔

 اے ایف پی کے مطابق امریکی فورسز کا کہنا تھا کہ جنگی طیاروں نے الشہاب کے عسکری ٹھکانوں پر حملے کیے۔

ان کا کہنا تھا کہ امریکی کارروائی الشہباب کی حالیہ حملوں کا ردعمل ہے

واضح رہے کہ الشہباب نے صومالی نیشنل آرمی فورسز پر جدید ہتھیاروں سے حملہ کیا تھا اور لڑائی کئی گھنٹوں تک جارہی تھی۔

امریکی کارروائی سے متعلق افریقا میں امریکی کمانڈر نے بتایا کہ شدت پسند تنظیم کے خلاف تازہ کارروائی سے ہونے والی ہلاکتوں کا جائزہ لیا جارہاہے۔

دوسری جانب عسکری حکام اور مقامی عمائدین کا کہنا تھا کہ الشہباب کے شدت پسندوں نے رات کے تیسرے پہر عسکری کیمپ پر حملہ تھا۔

صومالی عسکری حکام محمد ابدیکرن نے اے ایف پی کو بتایا کہ دہشت گردوں نے بلوگوڈیوڈ عسکری بیس پر جدید ہتھیاروں اور بارودی مواد کے ساتھ حملہ کیا تھا

انہوں نے مزید بتایا کہ دہشت گردوں کے حملے میں 6 فوجی جبکہ خود کش کار حملے میں 2 اہلکار ہلاک ہو گئے تھے۔

واضح رہے کہ گزشتہ برس اکتوبر میں امریکی فضائی حملے میں الشہاب کے تقریباً 60 جنگجو ہلاک ہو گئے تھے۔

اس سے قبل 2017 میں امریکا نے شدت پسند تنظیم کے ٹریننگ کیمپ پر حملہ کیا تھا جس میں تقریباً 100 سے زائد افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

گزشتہ چند ماہ سے الشہاب کے خلاف امریکی فضائی اور میزائل حملوں میں اضافہ ہو گیا ہے۔

واضح رہے کہ شدت پسند تنظیم الشہاب، القاعدہ سے منسلک تنظیم ہے جو موغادیشو میں امریکی تعاون پر مشتمل صومالیہ حکومت کے خاتمے کے لیے مسلح کوششیں کررہی ہے۔