سری لنکا: پولیس چھاپے کے دوران خودکش حملہ، 6 بچوں سمیت 20 افراد ہلاک

99

سری لنکا میں سیکیورٹی فورسز کے سرچ آپریشن کے دوران فائرنگ اور مشتبہ دہشت گردوں کے خود کو دھماکے سے اڑانے کے واقعے میں 6 بچوں سمیت 20 افراد ہلاک ہوگئے۔

برطانوی اخبار دی گارڈین کی رپورٹ کے مطابق فوجی ترجمان نے بتایا کہ سری لنکا کے مشرقی ساحلی علاقے باٹیکالوا کے قریب امپارہ سینٹمرتھ میں سیکیورٹی فورسز نے سرچ آپریشن کیا۔

ترجمان نے بتایا کہ چھاپے کے دوران دہشت گردوں نے سیکیورٹی فورسز پر فائرنگ شروع کردی جس کے بعد جوابی فائرنگ میں 4 دہشت گرد اور ایک راہگیر مارا گیا۔

اس سے قبل دیگر دہشت گردوں نے اپنے آپ کو دھماکا خیز مواد سے اڑالیا تھا جس کے نتیجے میں 6 بچوں سے سمیت 15 افراد مارے گئے جن میں 3 مشتبہ دہشت گرد شامل تھے۔

فوجی ترجمان کا کہنا تھا کہ انہیں کلیئرنگ آپریشن کے دوران جائے وقوعہ سے وہ آلات بھی ملے ہیں جن کی مدد سے مشتبہ دہشت گرد ویڈیو ریکارڈ کیا کرتے تھے۔

اس کے علاوہ سرلنکن فوج نے جائے حادثہ سے داعش کا جھنڈا اور وہ وردیوں کے ملنے کا دعویٰ بھی کیا ہے جنہیں داعش کے جنگجو پہنتے ہیں۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز ملٹری ترجمان کی جانب سے بیان سامنے آیا تھا کہ امپارہ سینٹمرتھ میں دھماکے کی آوازیں سننے کے بعد جب سپاہی تحقیقات کے لیے وہاں پہنچے تو ان پر فائرنگ کی گئی۔

فائرنگ میں ہلاکتوں کی تعداد سے متعلق ابتدائی طور پر کوئی اطلاعات موصول نہیں ہوئیں تھی۔

21 اپریل کو گرجا گھروں اور ہوٹلوں میں ہونے والے دھماکوں میں 300 سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے جس کے بعد پولیس نے تفتیش کا دائرہ کار وسیع کرتے ہوئے ملک بھر میں چھاپے مارے جبکہ داعش کی جانب سے دھماکوں کی ذمہ داری قبول کی گئی تھی۔

برطانوی اخبار مرر کی رپورٹ کے مطابق سری لنکا میں پولیس اور ایک گروہ کے درمیان ’سوسائڈ ویسٹ فیکٹری‘ میں اس وقت فائرنگ کا تبادلہ ہوا جب اسپیشل ٹاسک فورس نے اس گھر میں چھاپہ مارنے کی کوشش کی جہاں مشتبہ دہشت گرد چھپے تھے۔

جائے وقوع سے بڑی تعداد میں بم بنانے کے آلات، داعش کے یونیفارمز، 150 جیل اگنائیٹ اسٹکس، ایک لاکھ میٹل بالز اور ایک ڈرون کیمرہ برآمد ہوا۔

خیال کیا جارہا ہے کہ جس گھر میں چھاپا مارا گیا، وہاں تیار کی گئی خودکش جیکٹوں کو 21 اپریل کو دھماکوں میں استعمال کیا گیا تھا۔