پاکستانی معیشت میں چین کی شمولیت خطرناک ہے- آئی ایم ایف

37

عالمی مالیاتی ادارے (آئی ایم ایف) نے خبر دار کیا ہے کہ پاکستان میں چینی سرمایہ کاری یا اس کی معیشت میں چین کی شمولیت سے اسلام آباد کو فائدہ اور نقصان دونوں ہی ہوسکتے ہیں۔

میڈیا رپورٹس  کے مطابق آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک کی سالانہ نیوز کانرنس سے خطاب کرتے ہوئے آئی ایم ایف کے ماہر معاشیات مورس اوبسٹ فیلڈ نے کہا ہے کہ پاکستان نے باقاعدہ طور پر مالی امداد کے لیے آئی ایم ایف سے رابطہ نہیں کیا ہے لیکن اگر بیل آؤٹ پیکیج پر بات ہوتی ہے تو اس کا مقصد پاکستان کو اپنی پوری صلاحیت پر پہنچا دے گا۔

مورس اوبسٹ فیلڈ کا کہنا ہے کہ پاکستان کے بڑھتے ہوئے مالی اور کرنٹ اکاؤنٹ خسارے، کم ہوتے ذرمبادلہ کے ذخائر اور غیر لچکدار کرنسی کی وجہ سے اسے سرمایہ کاری کے بڑے خلا کا سامنا ہے۔

آئی ایم ایف کے ماہر معاشیات کا کہنا ہے کہ اگر عالمی مالیاتی ادارہ پاکستان کے ساتھ مذاکرات میں شامل ہوجاتا ہے تو اس مقصد اصلاحات ہوگا جو پاکستان کو مخصوص تفصیلات فراہم کیے بغیر ہی اس کی ملکی صلاحیت کو بہت زیادہ وسیع کر دے گا۔

حکومت نے ساختی اصلاحات نافذ کرنے سے متعلق اپنی خواہش کا اظہار کیا ہے جن سے پاکستان کی فنڈز کے ذریعے مالی مدد کی عادت ختم ہوجائے گی۔

چین کی پاکستان میں شرمایہ کاری سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کو انفرا اسٹرکچر کی ترقی کی زیادہ ضرورت ہے جس میں چین کی پاک چین اقتصادی راہداری (سی پیک) منصوبے میں سرمایہ کاری پاکستان کے لیے فائدہ مند ہوسکتی ہے۔

تاہم اپنے ان خیالات سے بر عکس ان کا مزید کہنا تھا کہ چین کی شمولیت سے پاکستان کو خطرات لاحق ہوسکتے ہیں۔

آئی ایم ایف کے ماہر معاشیات کا کہنا تھا کہ یہ بہت اہم ہے کہ ان منصوبوں کا ڈیزائن بہت مضبوط ہو جس میں ایسے قرضوں کو، جو ادا نہ کیے جاسکیں، نظر انداز کیا جانا چاہیے۔

حال ہی میں وزیرِ خزانہ اسد عمر کی جانب سے ایک بیان سامنے آیا تھا جس میں ان کا کہنا تھا کہ حکومت  آئندہ ہفتے آئی ایم ایف سے انڈونیشیا کے شہر بالی میں ہنگامی مالی امداد کے لیے مذاکرات کیے جائیں گے۔