بلوچی اکیڈمی کوئٹہ کے گرانٹ میں کٹوتی بلوچی زبان و ادب کے ساتھ زیادتی ہے ۔ ایس ایچ آر ایل

35

حکومت کی ذمہ داری ہے کہ وہ بلوچی زبان و ادب کی ترویج و ترقی کے لئے کام کرنے والے اداروں کی سرپرستی کرے – سید ہاشمی ریفرنس لائبریری

سید ہاشمی ریفرنس لائبریری، ملیر کراچی کیجانب سے جاری کردہ بیان میں بلوچستان حکومت کی جانب سے بلوچی اکیڈمی کوئٹہ کے سالانہ گرانٹ میں کٹوتی کی مذمت کی گئی ہے۔

سید ہاشمی ریفرنس لائبریری ملیر کے ترجمان کا کہنا ہے کہ گذشتہ دنوں حکومت بلوچستان نے بلوچی زبان کی ترقی و ترویج کے لیے کام کرنے والے ادارے بلوچی اکیڈمی کوئٹہ کے سالانہ گرانٹ میں 25 فیصد کمی کی ہے جو اس ادارے کے ساتھ ساتھ بلوچی زبان و ادب کے ساتھ بھی زیادتی ہے۔

ان کا مزید کہنا ہے کہ بلوچی اکیڈمی عرصہ دراز سے بلوچی زبان و ادب کی خدمت لئے سرگرم عمل ہے اور اس وقت بھی بہت سے منصوبوں پر کام کر رہا ہے۔ حکومت کی ذمہ داری ہے کہ وہ بلوچی زبان و ادب کی ترویج و ترقی کے لئے کام کرنے والے اداروں کی سرپرستی کرے اور انہیں وہ تمام وسائل مہیا کرے جو کسی زبان و ادب کی ترقی کے لئے لازم ہیں۔

سید ہاشمی ریفرنس لائبریری بلوچی اکیڈمی کے گرانٹ کے کٹوتی کے عمل کی پُر زور الفاظ میں مذمت کرتی ہے اور مطالبہ کرتی ہے کہ حکومت بلوچستان بلوچی اکیڈمی کے گرانٹ کو بحال کرے ۔