کنا مار ای نے وطن کہ ندر کریٹ – نودان بلوچ

54

“کنا مار ای نے وطن کہ ندر کریٹ”

 نوشت: نودان بلوچ

دی بلوچستان پوسٹ

ہراسہ عمل اسے کہ انتہائس ضروری ئے۔ انتہاء ہمو عمل نا جنون پاننگک۔ دُنکہ محبت نا انتہاء عشق ئے و عشق محبت نا جنون ئے۔ تینا مقصد کہ بند غ ہراتم انتہاء غا سرمس گڑا چاس کہ او ہمو عمل تون جنون نا حداسکان محبت کیک۔

بلوچ تحریک تون ہرہمو بلوچ سپاہی محبت کیک ہراکہ ملاس بینگُن لنگڑ شپاد بے نپاد و بے اُرا مَش تیٹ بیابان تیٹ تموک دا عمل ٹی تینا ونڈے شاغسہ ہراسہ خوشی نا قربانی ئے تننگ ئے او تینا اُرا، زائیفہ، چنا، لمہ، باوہ، ایڑ، ایلم سیال قریب کل آتے ہندا عمل نا سرسوبی کہ ہلانے۔ تینا زند ئنا ہر خواہش ہر مراد ہر گل و بالی ئے ہندا عمل نا خاتر خیر خلکونے سنگرکرینے تولوکے۔ کلان زیات داکہ داعمل ٹی اوڑکہ زاتی وڑاٹ فاہدہ مندی اف بلکہ او راج اسے نا فاہدہ مندی کہ تینا سائے دلدستا تخانے۔ ہر وخت او مرک آتون ہمرا ئے۔

داکل اونا دا عمل تومہر و مابت نا نشانیکو ولے دا عمل ٹی ہرا انتہائی آ عملی قربانی نا درشانی ئے ’’شہید درویش بلوچ وشہید ریحان بلوچ‘‘ کریر۔ دا فک بلوچ تحریک نا تاریخ نا اسہ باب ئس گوندنگرہ۔

زوتیٹ بہادرا جرأت مندا ریحان بلوچ نا چینی انجینئر تا بس آ ڈالبندن ٹی فدائی حملہ (ہراٹی چندی چینی انجینئر و پاکستانی اہلکار کسکُر چندیک ٹپی مسُر)
دا گڑانا کلہو ئے تینا دشمن ئے تس کہ نن تینا دا تحریک تون عشق کینہ ہراکہ محبت نا انتہائے۔

شہید ریحان بلوچ نا انتہائی درجہ غا بلوچ تحریک ٹی ہرفوکا دا گام نہ بیرہ دشمن ریاست ٹی ہڑز ئس شاغا بلکہ دنیا جہان نا معاشی منڈی تے آ ایسٹ انڈیاکمپنی ناوڑ قوضہ گیرمروکا چین ئے ہم سُرفے، اوفک مجبور مسُر بلوچ گوریلا جنگ نا ذمہ وارآتون ہیت وگپ کننگ ئے شروع کریر کہ ننے آن سی پیک نا مَداٹ انتس خوارے ایتنہ نمے ننا سی پیک نا پروجیکٹ ئے ڈسٹرب کپہ بو۔ بننگ ہندادے کہ بازا خواجہ غاک چین نا دا سودابازی نا جوفہ ٹی تمسہ کلٹی ہم مسنو۔

ریحان بلوچ نا باوہ جان و شیرزال آ لمہ ہم دا عمل ٹی تینا عشق ئنا ہرا درشانی ئے کرینو اونا ہم مثیال تاریخ ٹی ملپک۔ ہراوڑ اسہ لمہ ئس تینا ورنا انگا مارے رخصت کیک پائک کہ ’’اللہ نا جولی ٹی اُس کنا مار ای نے وطن کہ ندر کریٹ‘‘ دا اسہ جملہ ئس اف داٹی باز بھلو معانی ئس تخوکے۔ داعمل اسہ بھلو جغر ئس خوائک کہ لمہ و باوہ تینا مارے تینٹ خودکش کہ راہی کننگو اوفتے خبرے ہم ننا چنا داٹی زندہ بچپک۔

ایلو پارہ غا دا عمل بلوچ تحریک ٹی پوسکنو جوزہ و ولولہ ئس ہم ودی کرے۔ انتئے کہ دا نیامٹ اسُل چپ چپانی ئس تالان ئس، مخلوق ہندا پاریکہ کہ جنگ چُٹّا ولے دا ’’شہید یحان بلوچ‘‘ نا فدائی حملہ اسہ پین تَک سُر اس ودی کرسہ اصل گوریلا جنگ نا وڑ و ڈول، حکمت عملی تے شان تس کہ دافک تینے خرما تا وڑ جوان سَرپّیرہ موقع ئے بریبر کرسہ حملہ ئس کیرہ۔
ولے ایلو پارہ غادا فدائی حملہ وریحان بلوچ نا شہادت آن پد حیربیار مری نا بروکا ردعمل مخلوق نا زہن تیٹ بھلو سوال ئس بَش کرے۔

سوال ہندادے کہ اسہ پارہ غان ورناک تینا سائے دلدستہ تخسہ دا محبت نا انتہائی درجہ غا ہنسہ تینے قربان کننگو۔ ایلو پارہ غا دا ڈھیہ دا جنگ نا میدان آن ہزارا میل مُر جواننگا بخملی آ کرسی تے آتولوک اسہ ہندنو بندغ ئس داعمل ئے خراب پائک ہرا بندغ نا جند تینٹ وخت اسے ٹی دا تنظیم نا مُہکش مسونے۔ دا وڑنا گڑاک تحریک نا حوالہ ٹی خاص کر ہمو اُراتیٹ ہمو بندغاتیٹ اسہ نااُمیدی ئس تالان کیرہ ہرافتا چناک داتحریک ٹی شہید ریحان بلوچ، شہید درویش بلوچ نا وڑ قربانی ترسہ شہید مسنو ہرافتا تعداد داسا ہزارآن گیش ئے۔داوڑنا ردعمل تے تورنگ کہ بائدے تنظیم نا ارٹمی کمان مون مستی برسہ تینا لائحہ عمل ئے جوڑیر۔